یونان کی ترکی کیخلاف عالمی عدالت جانے کی دھمکی

یونان:یونان نے پڑوسی ملک ترکی کی جانب سے بے جا مداخلت اور یونانی مفادات کو نقصان پہنچانے پر یونانی وزیراعظم نے ترکی کے خلاف عالمی عدالت میں جانے کی دھمکی دی ہے۔اگرچہ یونان کی جانب سے متعدد بار ترکی کے ساتھ جاری کشیدگی کم کرنے کا عندیہ دیا اور انقرہ کے ساتھ خیر سگالی کے جذبات کا اظہار کیا، مگر اس کے باجود یونان کے وزیراعظم کریاکوس میتسوتکیس نے کہا ہے کہ ترکی نے اپنے تصرفات تبدیل نہ کیے تو ان کا ملک اپنے مفادات کا تحفظ کرے گا۔انہوں نے کہا کہ یونان ترکی کے ساتھ دیانت دارانہ اور نتیجہ خیز مکالمیکے لیے پر عزم ہے۔ اس کے باوجود اگر انقرہ نے اپنی روش نہ بدلی تو ہمارے پاس اپنے مفادات کیدفاع کے لیے اور کوئی راستہ نہیں بچے گا۔یونان کی سرکاری نیوز ایجنسی نے وزیراعظم کریاکوس میتسوتکیس کا ایک بیان نقل کیا ہے جس میں ان کا کہنا تھا کہ یورپی یونین جلد رکن ممالک کے تزویراتی مفادات کی خاطر اہم اقدامات کا اعلان کرے گی۔انہوں نے کہا کہ یونان اور ترکی کو مذاکرات کے ذریعے اپنے مسائل حل کرنا ہوں گے۔ اگر اختلافات بات چیت کے ذریعے حل نہیں ہوتے تو ہمارے پاس بین الاقوامی عدالت انصاف سے رجوع کا آپشن موجود ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ ترکی کے اقدمات نے سال 2020کے دوران نیٹو کی وحدت کو بہت زیادہ نقصان پہنچایا ہے۔خیال رہے کہ گذشتہ ہفتے ترک صدر نے قبرص کے شمالی متنازع علاقے واروشا کا دورہ کیا تھا جس پر یونانی حکومت کی طرف سے سخت رد عمل سامنے آیا ہے۔

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*