یوگی حکومت نے عدالت سے کہا:پنجاب سرکار بے شرمی سے گینگسٹر مختار انصاری کو بچا رہی ہے

نئی دہلی:اتر پردیش حکومت نے بدھ کے روز سپریم کورٹ کو بتایا کہ مختلف معاملات میں مقدمے کا سامنا کر رہے اور گینگسٹر سے سیاستداں بنے مختار انصاری کا پنجاب حکومت بے شرمی سے دفاع کر رہی ہے، انہیں اترپردیش نہیں بھیجا جارہا ہے۔ انصاری مبینہ طور پر رنگداری کے مقدمے میں پنجاب کی روپ نگر ضلع جیل میں بند ہیں۔ جسٹس اشوک بھوشن اور جسٹس آر ایس ریڈی کی بنچ نے سینئر ایڈوکیٹ دشینت دیو کی اس رپورٹ کو سنجیدگی سے لیا، جس نے نجی وجوہات کا حوالہ دیتے ہوئے کیس کی سماعت ملتوی کرنے کی درخواست کی۔ اتر پردیش کی طرف سے پیش ہوئے سالیسیٹر جنرل تشار مہتانے کہا کہ دیو کی اس کیس کو ملتوی کرنے کی درخواست پر انہیں کوئی اعتراض نہیں ہے۔ عدالت عظمیٰ نے کیس کی سماعت 2 مارچ تک ملتوی کردی۔ انصاری کی طرف سے پیش ہوئے سینئر ایڈووکیٹ مکل روہتگی نے کہا کہ مختار ایک چھوٹی مچھلی ہے جسے ریاست (انتظامیہ) نے چاروں طرف سے گھیر لیا ہے۔ اس پرمہتا نے کہاکہ آپ ایک معمولی شخص ہیں، جسے ریاست (پنجاب) بے شرمی سے بچارہی ہے۔ انصاری جنوری 2019 سے پنجاب کی روپ نگر ضلع جیل میں بند ہیں۔