وزیر اعلی بننے کے بعد ہیمنت بسوا شرماکااعلان،سرحدی اضلاع میں 20 فیصد اور دیگر علاقوں میں 10 فیصد ناموں کاہوگادوبارہ ویریفکیشن

گوہاٹی: آسام کے نئے وزیر اعلی ہیمنت بِسواشرما نے پیر کو کہا کہ ان کی حکومت کا ہدف اگلے پانچ سالوں میں ریاست کو ملک کی اعلی 5 ریاستوں میں شامل کرناہے۔ وزیر اعلی کے عہدے کا حلف اٹھانے کے بعدشرما نے کہاکہ ہم اس مقصد کو حاصل کرنے کے لیے کل سے کام شروع کردیں گے۔شرما نے کہا کہ آسام میں دوسری بار بننے والی بی جے پی حکومت کی مرکزی توجہ کووڈ 19 وبا کو کنٹرول کرنا، تمام وعدے پورے کرنا اور ریاست کو سالانہ سیلاب کے بحران سے آزاد کرنا ہے۔انہوں نے کہاکہ آسام میں کووڈ 19 کی صورتحال نازک ہے، ہمارے روزانہ معاملات کی تعداد 5000 سے تجاوز کر چکی ہے، ہم کل کابینہ میٹنگ میں تمام پہلوؤں پر تبادلہ خیال کریں گے اور اقدامات کریں گے۔انہوں نے کہا کہ جب تک آسام میں وبا پر کنٹرول نہیں ہوگا، شمال مشرقی دیگر ریاستوں میں بھی معاملات میں کمی نہیں آئے گی۔شرما نے باغی گروپوں خصوصا الفا (آئی) سے ہتھیارڈال کر مرکزی دھارے کا حصہ بننے کی درخواست کی ہے۔ وزیراعلیٰ نے کہاکہ میں پریش بروا سے درخواست کرتا ہوں کہ وہ مذاکرات کی میز پر آئیں اور معاملات حل کریں۔ اغوا اور قتل سے مسائل پیچیدہ ہوتے ہیں حل نہیں ہوتے، مجھے امید ہے کہ ہم اگلے پانچ سالوں میں زیرزمین باغیوں کو قومی دھارے میں واپس آنے کے لیے تیار کریں گے۔
متنازعہ شہریت ترمیمی قانون (این آر سی) کے بارے میں پوچھے جانے پروزیر اعلی نے کہا کہ ان کی حکومت آسام کے سرحدی اضلاع میں 20 فیصد اور دیگر علاقوں میں 10 فیصد ناموں کی دوبارہ توثیق(ری ویرفکیشن) کرنا چاہتی ہے۔انہوں نے کہاکہ اگر انتہائی معمولی غلطیاں پائی گئیں تو ہم موجودہ این آر سی کے ساتھ مل کر مزید کارروائی کرسکتے ہیں لیکن اگر اس میں وسیع پیمانے پر تضادات پائے جاتے ہیں تو میرے خیال میں عدالت سنجیدگی اختیار کرے گی اور ایک نئے نقطہ نظر کے ساتھ آگے بڑھے گی۔جب بی جے پی سے ’لو جہاد‘ کے خلاف قانون لانے کی یقین دہانی کے بارے میں پوچھا گیا توشرما نے کہاکہ اسے پورا کرنے کا وعدہ کیا گیا ہے، اسے پوراکرنے کے لیے ہم ہر ممکن کوشش کریں گے۔