وسطی کروشیا میں زلزلہ، ایک بچی ہلاک، مالی نقصان بہت زیادہ

زگریب ، لندن:
کروشیا میں منگل کے دن آنے والے زلزلے سے پیدا ہونے والے زور دار جھٹکوں نے ملک میں خوف و ہراس پھیلا دیا۔ اس قدرتی آفت کے نتیجے میں ایک بچی ہلاک بھی ہو گئی۔کروشیائی حکام کے مطابق دارالحکومت سے پچاس کلومیٹر دورایک علاقے میں آنے والے زلزلے نے متاثرہ علاقوں میں اتنا خوف پھیلایا کہ لوگ اپنے اپنے گھروں اور ملازمین کام کی جگہوں سے بھاگ کر باہر کھلی سڑکوں کی طرف دوڑنے پر مجبور ہو گئے۔اس زلزلے کے بعد بہت ساری سڑکوں اور مکانات میں بڑی بڑی دراڑیں واضح طور پر دکھائی دیتی ہیں۔ کئی عمارتیں ملبے کا ڈھیر بن گئی ہیں اور امدادی کارکن ان کا ملبہ ہٹانے میں مصروف ہیں تا کہ اس میں دبے افراد کو زندہ سلامت باہر نکالا جا سکے۔زلزلے کے جھٹکے کروشیا کے علاوہ سربیا اور بوسنیا میں بھی محسوس کیے گئے۔ کروشیا کے ہمسایہ ملک سلووینیہ نے زلزلے کے بعد اپنا جوہری توانائی کا پلانٹ فوری طور پر بند کر دیا تا کہ اسے محفوظ رکھا جا سکے۔ یورپی کمیشن کی صدر نے کروشیا کو مدد فراہم کرنے کا عندیہ دیا ہے۔جنوب مشرقی یورپی ملک کروشیا میں منگل انتیس دسمبر کو آنے والے زوردار اور شدید زلزلے کی شدت ریکٹر اسکیل پر 6.4 ریکارڈ کی گئی ہے۔ اس کا مرکز دارالحکومت زغرب (زگرب) سے پچاس کلو کی دوری پر واقع ملک کا وسطی قصبہ پیترینیا بتایا گیا ہے۔اسی علاقے میں ایک روز قبل بھی زلزلے کے ہلکے جھٹکے محسوس کیے گئے تھے۔ زلزلے کے جھٹکوں سے سارا ملک لرز کر رہ گیا۔ زغرب میں منگل کی شام تک ہزاروں لوگ مکانوں اور رہائشی عمارتوں میں واپس جانے سے گھبرا رہے تھے۔اب تک کی اطلاعات کے مطابق زلزلے کے مرکزی مقام پیترینیا میں ایک بچی کے ہلاک ہونے کی تصدیق کی گئی ہے۔ کروشیا کے وزیر اعظم اندرے پلینکووچ بھی فوری طور پیترینیا پہنچ گئے ہیں۔انہوں نے رپورٹرز کو بتایا کہ ابھی تک ایک بچی کے مرنے کی اطلاع ہے اورمزید جانی نقصان کی تصدیق ہونا ابھی باقی ہے۔دوسری جانب بعض مقامی صحافیوں کا کہنا ہے کہ جانی نقصان میں اضافے کا قوی امکان ہے۔ کئی عمارتوں کے مکمل طور پر منہدم ہونے کا بتایا گیا ہے۔ اس کے علاوہ کئی مکانوں کی چھتیں بھی زمیں بوس ہوئی ہیں۔

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*