یوپی:کوروناسے نمٹنے کے انتظامات پرعدالت مطمئن نہیں،ناقص حلف نامہ پربھی حکومت کی سرزنش

الہ آباد:الہ آبادہائی کورٹ نے اتر پردیش میں کوروناکے بڑھتے ہوے معاملات پر عدم اطمینان کا اظہار کیاہے۔ ہائی کورٹ نے ریاست کے چار بڑے شہروں میں کورونا سے بچاؤکے اقدامات پر عدم اطمینان کا اظہار کیا ہے۔ لکھنؤ،غازی آباد،گوتم بدھ نگر اور میرٹھ میں کورونا انفیکشن سے بچاؤکی کارروائیوںسے عدالت مطمئن نہیں ہے۔عدالت نے کہاہے کہ پولیس اس انفیکشن کوپھیلنے سے روکنے کے لیے بھرپور کوششیں کررہی ہے ، لیکن اس کے باوجود کوویڈ کا انفیکشن پھیل رہا ہے۔ عدالت کا کہنا ہے کہ وائرس کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے بہت کچھ کرنا باقی ہے۔ لکھنؤ ، غازی آباد ، گوتم بدھ نگر اور میرٹھ کے پولیس اور انتظامی سربراہان نے حلف نامے داخل کردیئے تھے۔ ہائی کورٹ نے کہاہے کہ حلف نامے میں مکمل معلومات نہیں دی گئی ہیں۔عدالت نے اگلی تاریخ کو بہتر معلومات کے ساتھ ایک حلف نامہ طلب کیاہے۔عدالت نے ہر کانسٹیبل کوہر سڑک پرہردو کلومیٹر پر تعینات کرنے کی ہدایت کی ہے اور یہ بھی کہا ہے کہ پولیس کانسٹیبل ماسک پہننے کو لازمی قراردیں۔عدالت نے اگلی سماعت پر پولیس اہلکاروں کے ناموں کی فہرست پیش کرنے کی بھی ہدایت کی ہے۔ایڈووکیٹ جنرل منیش گوئل نے عدالت کو آگاہ کیاہے کہ ہر روز کوروناجانچ میں اضافہ کیاجارہا ہے۔ اسی دوران لکھنؤ کے ڈی ایم کا حلف نامہ دیکھ کر عدالت نے تشویش کا اظہار کیا ہے۔ عدالت نے کہاہے کہ روزانہ 300 سے زیادہ انفیکشن ہونے کی فکرہے۔