مغربی بنگال اسمبلی انتخابات:ٹی ایم سی کا بنگال کی بیٹی کے نعرے پر زور،بھاجپا پر ہندوتواحاوی

کولکاتا:مغربی بنگال میں اسمبلی انتخابات کی تاریخوں کا اعلان جمعہ کو کردیا گیا ہے ، لیکن بی جے پی اور ترنمول کے مابین گذشتہ 2 سالوں سے جاری سیاسی اٹھاپٹخ جاری ہے۔ درگا پوجا جیسے مذہبی واقعہ سے لیکر رویندر ناتھ ٹھاکر ، نیتا جی سبھاش چندر بوس کی یوم پیدائش جیسے واقعات تک بہت زیادہ سیاست کی گئی ۔ اب اس لڑائی میں مرکزی حکومت کی سی بی آئی اور ریاستی حکومت کی سی آئی ڈی بھی شامل ہوگئی ہے۔ سی بی آئی نے کوئلہ گھوٹالہ میں ممتا بنرجی کے بھتیجے ابھیشیک کی اہلیہ کو نوٹس جاری کیا ہے۔ دریں اثنا ریاستی حکومت کی سی آئی ڈی نے کوکین کیس میں بنگال بی جے پی رہنما پامیلا گوسوامی کو گرفتار کرلیا۔دونوں جماعتیں ایک دوسرے پر سرکاری اداروں کے غلط استعمال کا الزام عائد کررہی ہیں۔ اب انتخابات کی تاریخوں کے اعلان کے حوالے سے الزامات اور جوابی الزامات کا آغاز ہوگیا ہے۔ وزیر اعلی ممتا بنرجی نے ریاست میں 8 مرحلہ کے انتخابات پر سوال اٹھاتے ہوئے کہا کہ جب تمل ناڈو اور آسام جیسی ریاستوں میں ایک مرحلے میں انتخابات ہو رہے ہیں تو پھر بنگال میں 8 مراحل میں انتخابات کی ضرورت کیوں ہے ؟ اس الزام کے بارے میں بی جے پی کے ریاستی ترجمان کا کہنا ہے کہ 2011 میں ممتا بنرجی ہی تھیں جنہوں نے انتخابات کو زیادہ مراحل میں کرانے کی اپیل کی تھی۔ انتخابات پرامن انداز میں ہونے چاہئیں ، لہٰذا ، یہ 8 مراحل میں ہو رہے ہیں۔ جنوبی بنگال اور جنگل محل کے علاقوں میں بی جے پی کو مضبوط سمجھا جاتا ہے۔ اس خطے کے بیشتر اضلاع میں ایک یا دو مراحل میں انتخابات ہوں گے ، جبکہ ممتا کے مضبوط گڑھ مرشد آباد ، مالدہ ، ہاؤڑہ ، ہگلی ، جنوبی شمالی پر گنہ میں انتخابات مختلف مراحل میں ہوں گے۔ اس کے علاوہ چھ نمبر کے مرحلے کی 43 اسمبلی نشستوں کے لیے انتخابات رام نومی کے اگلے دن 22 اپریل کو ہیں۔ ترنمول کے رہنماؤں کا کہنا ہے کہ یہ جان بوجھ کر کیا گیا ہے۔ ان علاقوں میں بی جے پی رام کارڈ کھیلنا چاہتی ہے۔انتخابات کے اعلان سے ایک دن پہلے بی جے پی کے قومی صدر جے پی نڈا کا شمالی 24 پرگنہ ضلع میں ایک پروگرام تھا ، لیکن وہ وہاں پہنچنے سے پہلے شیام نگر میں بی جے پی اور ترنمول کارکنوں کے درمیان پرتشدد تصادم ہوگیا۔بنگال میں مقامی سیاست کے ماہرین کہتے ہیں ، "ریاست میں کارکنوں کے مابین پرتشدد سیاسی جھڑپوں کا انداز بہت پرانا ہے ، لیکن اس بار انتخابات کے دوران بڑے پیمانے پر سیاسی تشدد ہوسکتا ہے۔ترنمول اور بی جے پی ایک طویل عرصے سے انتخابی تیاریوں میں مصروف ہیں ، لیکن بنگال پر 34 سال حکمرانی کرنے والے لیفٹ خیمہ میں انتخابات کے اعلان کے بعد بھی کوئی حرکت نہیں ہوئی۔ یہی صورتحال کانگریس کی بھی ہے۔ شہری علاقے بی جے پی ترنمول کے جھنڈوں سے ڈھکے ہوئے ہیں ، لیکن بائیں بازو کانگریس کے پوسٹر بینر کہیں بھی نظر نہیں آرہے ہیں۔ترنمول کانگریس نے نعرہ دیا ہے ’بنگال کو اپنی بیٹی کی ضرورت ہے‘ اس نعرے کے ساتھ ہی ممتا بنرجی کے پوسٹر کولکاتہ کی گلی کوچے اٹے پڑے ہیں ۔ ترنمول بار بار وزیر اعظم مودی اور امت شاہ کو نشانہ بناتے ہوئے مقامی بنگالی بمقابلہ بیرونی افراد کرنے کی کوشش کررہی ہے۔ ادھر بی جے پی کے پاس ابھی سب سے بڑا مسئلہ یہ ہے کہ اس کے پاس ریاست میں ممتا کے قد کا کوئی بنگالی لیڈر نہیں ہے۔ ترنمول کے جے بنگلہ کے جواب میں بی جے پی نے سونار بنگلہ مہم کا آغاز کیا ہے۔ جو ترنمول کانگریس کی مہم کے آگے بونا ثابت نظر آیا ۔ وہیں بی جے پی اپنی فطرت اور مخصوص ایجنڈے کے مطابق ہندوتوا کے معاملہ کو اٹھایا ہے اوراس کے ساتھ ہی اسے امید بھی ہے کہ ہندو ووٹرز کا ایک بہت بڑا حصہ اسمبلی انتخابات میں بھی بی جے پی کے حق میں آئے گا۔