طالبان اور افغان حکومت کے درمیان امن مذاکرات کا آغاز،ہندوستانی وزیر خارجہ کی شرکت

دوحہ:ہندوستان کے وزیرخارجہ ایس جے شنکرنے دوحہ میں افغانستان امن معاہدے پر طالبان اور افغان حکومت کے مابین مذاکرات کی افتتاحی تقریب سے خطاب کیا۔ جس میں انھوں نے بنیادی طور پر ہندوستان اور افغانستان کے مابین تاریخی تعلقات اورتعاون کواجاگرکیا۔ اس موقعے پروزیرخارجہ نے افغانستان کی ترقی کے 400 منصوبوں کا حوالہ دیتے ہوئے کہاکہ یہ دونوں ممالک کے مابین تعلقات کی گواہی ہے۔انھوں نے اس بات پرزور دیا کہ افغانستان کو امن بات چیت کرنی چاہیے اوروہاں خواتین اور اقلیتوں کے مفادات کو ملحوظ خاطر رکھناچاہیے۔طالبان کی اقتدار میں شمولیت کے بعد ہندوستان کواپنے مفادات پر طالبان کی طرف سے چوٹ پہنچنے کا خدشہ ہے،جس کی وجہ سے وہ اسے محتاط نظروں سے دیکھ رہا ہے۔ قابل ذکر ہے کہ وزیر خارجہ نے اقلیتوں کانام لے کر افغانستان میں مقیم ہندوؤں اور سکھوں کے تحفظ کی بات کی ہے ۔

اس سے قبل مذاکرات کے آغاز کے موقعے پر امریکی وزیر خارجہ مائیک پومپیو نے کہاکہ امریکہ ایک خودمختار، متحد، جمہوری اور پُرامن افغانستان کا حمایت کرتا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ افغانستان میں مستقبل کے سیاسی نظام کا انتخاب یقیناً آپ کو کرنا ہے۔ امریکہ کا ماننا ہے کہ جمہوریت خاص طور پر سیاسی طور پر پرُامن طریقے سے اقتدار کی منتقلی کا اصول بہترین طرح سے کام کرتا ہے۔ان کا یہ بھی کہنا تھا کہ امریکہ اپنے بہت سے اتحادیوں اور شراکت داروں کی حمایت کو کبھی فراموش نہیں کرے گا جو اس طویل جنگ کے خاتمے کی جدوجہد میں ہمارے ساتھ کھڑے ہیں۔ آج ہم ان سب افراد کو یاد کرکے انھیں خراجِ تحسین پیش کرتے ہیں۔

قابل ذکر ہے کہ افغان حکومت نے ستمبر کی دس تاریخ کو یہ اعلان کیا تھا کہ طالبان کے ساتھ بین الافغان مذاکرات قطر کے دارالحکومت دوحہ میں بارہ ستمبر سے شروع ہوں گے۔ افغان حکومت کا ایک وفد جمعہ کے روز 11 ستمبر کو کابل سے دوحہ روانہ ہواتھا۔ یہ وہی تاریخ ہے جب 19 برس قبل امریکہ پر وہ حملے ہوئے تھے جن کے نتیجے میں طالبان کی حکومت کا خاتمہ ہوا تھا۔ افغان حکومت کی طرف سے مذاکرات کے لیے نامزد کردہ 21 رکنی سرکاری کمیٹی کی قیادت کرنے کے لیے افغان خفیہ ادارے کے سابق سربراہ معصوم ستانکزئی کو مقرر کیا گیا ہے،جبکہ افغان طالبان نے بھی ان مذاکرات کے لیے اکیس رکنی ٹیم کا اعلان کیا ہے۔ طالبان کی جانب سے ان مذاکرات کی قیادت طالبان کے چیف جسٹس مولوی عبدالحکیم کررہے ہیں۔

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*