سپریم کورٹ نے پہلی بارجاری کیا ہیلپ لائن نمبر

لاک ڈاؤن کے درمیان آن لائن درج کرسکتے ہیں پٹیشن
نئی دہلی:ہندوستان کی سپریم کورٹ کی تاریخ میں پہلی بار،رجسٹری نے ایک ہیلپ لائن شروع کی ہے۔یہ ہیلپ لائن دراصل ای فائلنگ سے منسلک سوالات اور مسائل کو دور کرنے کے لئے بنائی گئی ہے۔لاک ڈاؤن کی وجہ سے سپریم کورٹ نہیں کھل رہاہے۔جج ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے مقدمات کی سماعت کرتے ہیں۔عرضی دائر کرنے کے لئے سپریم کورٹ کی ویب سائٹ پر ای فائلنگ کی سہولت دی گئی ہے،مگر وکلاء اور درخواست گزاروں کو اس میں کچھ دقتیں آرہی ہیں،انہیں کو دور کرنے کے لئے ایک ہیلپ لائن نمبر 1881 شروع کیا گیا ہے۔یہ ہیلپ لائن صبح 10 بجے سے شام 5 بجے تک دستیاب رہے گی۔اس نگرانی کا ذمہ سپریم کورٹ کے سینئر افسران کا ہوگا۔لاک ڈاؤن میں، ججوں کے گھر میں بنچ بیٹھا کرتی ہے اور وکیل اپنے گھروں یا آفس سے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعہ جانتے ہیں۔25 مارچ کو لاک ڈاؤن کے بعد سے ہی سپریم کورٹ ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے کیس سن رہا ہے۔اسی منگل کو سپریم کورٹ نے کہا تھا کہ پائلٹ پروجیکٹ کے طور پر جج سپریم کورٹ کے اندر آپ کورٹروم میں بیٹھنا شروع کر سکتے ہیں۔اگلے ہفتے سے وہ وہیں سے ویڈیوکانفرنسنگ کے ذریعے سماعت کر سکتے ہیں۔