نوجوت سدھو کا دورۂ پاکستان : عمران خان کو بڑا بھائی کہا،بی جے پی کا ہنگامہ

لاہور؍چنڈی گڑھ :پنجاب صوبائی کانگریس کے صدر نوجوت سدھو نے ایک بار اپنے بیان سے تنازعہ کھڑا کر دیا ہے۔ کرتار پور کوریڈور سے گروارہ کرتار پور صاحب کے درشن کے لیے پاکستان پہنچے سدھو نے پاکستان کے وزیر اعظم عمران خان کو اپنا بڑا بھائی قرار دیا۔کرتارپور میں سدھو نے کہا کہ کرتارپور کوریڈور پی ایم نریندر مودی اور پاکستانی وزیراعظم عمران خان نیازیؔ کی کوششوں سے کھولا گیا ہے۔ بڑے بھائی والا بیان سامنے آتے ہی بی جے پی نے سدھو پر الزام لگایا، تو سدھو نے اس کے جواب میں کہا کہ بی جے پی والے کچھ بھی کہتے رہیں، کوئی فرق نہیں پڑتا ہے۔ وہیں وزیر پرگت سنگھ نے کہا کہ جب وزیر اعظم مودی پاکستان جاتے ہیںاور وہاں جاکر بریانی کھاتے ہی، تو وہ ’دیش بھکت‘ ہیں ، لیکن جب سدھو پاکستان جاتے ہیں تو وہ ملک کے غدار ہوجاتے ہیں ، یہ کون سا دوہرا معیار ہے ؟ پچھلی بار بھی جب نوجوت سنگھ سدھو پاکستان گئے تھے، تو انہوں نے کرتار پور کوریڈور کھولنے کے معاملہ پر پاک فوج کے جنرل قمر باجوہ سے گلے ملے تھے ۔ اس کے بعد ان کی شدید مخالفت ہوئی تھی۔ ایسے میں سب کی نظریں ان کے آج کے دورے پر جمی ہوئی تھیں۔اس سے قبل وزیر اعلیٰ چرنجیت سنگھ چنی ریاستی سربراہ نوجوت سنگھ سدھو کو 18 نومبر کو ہی شری کرتار پور صاحب کے درشن کے لیے اپنے ساتھ لے جانا چاہتے تھے، لیکن سدھو اپنے حامیوں کے ساتھ جانے کو تیار تھے۔ چنانچہ انہوں نے الگ الگ جانے کا ارادہ کیا۔