شفق کی آگ نے دہکا دیا فضاؤں کو ـ شہزاد احمد

شَفق کی آگ نے دہکا دیا فضاؤں کو
جہاں میں تیرگیِ شام کا نِشاں بھی نہیں

تلاش خاک اُڑاتی ہے رہگزاروں میں
وہ کارواں بھی نہیں، گَردِ کارواں بھی نہیں

تُمہاری بزم سے بھی اُٹھ چَلے ہیں دیوانے
جسے وہ ڈُھونڈ رہے تھے وہ شے یہاں بھی نہیں

سمجھ سکو تو سمجھ لو غمِ فراق کی بات
دِلوں کا دَرد عیاں بھی نہیں، نہاں بھی نہیں

کوئی خیال لیے جا رہا ہے جانبِ دوست
وگرنہ قافلۂ دِل رَواں دَواں بھی نہیں

غمِ فراق کی تلخی سے لَو لگا کر دیکھ
نِشاطِ وَصل کی لذّت تو جاوداں بھی نہیں

جہاں چَمن تھا وہاں دُھوپ خاک اُڑاتی ہے
جہاں بہار تھی اب تو وہاں خزاں بھی نہیں

اُمیدِ منزلِ مقصُود کیا کروں شہزادؔ!
مِرے نصیب میں اب یادِ رَفتگاں بھی نہیں

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*