سید محمد افضل نقوی کے انتقال پر شعبۂ عربی ڈی یو میں تعزیتی نشست کا انعقاد

نئی دہلی:آل انڈیا ریڈیو کے عربی یونٹ کے سابق سپروائزرسید محمد افضل نقوی کی وفات پر دہلی یونیورسٹی کے شعبۂ عربی میں تعزیتی نشست کا اہتمام کیا گیا، تعزیتی نشست میں شعبہ کے اساتذہ نے سید محمد افضل نقوی کے انتقال پر رنج وغم کا اظہارکرتے ہوئے مر حوم کے لیے دعاء مغفرت کی۔تعزیتی نشست سے خطاب کرتے ہوئے پروفیسر محمد نعمان خان نے کہاکہ مرحوم نیک طبیعت اور منکسر المزاج تھے ، ان کا انتقال ہم سب کے لیے بڑا نقصان ہے۔پروفیسر سید حسنین اختر نے کہاکہ مرحوم کا تعلق علمی خانوادے سے تھا،وہ نہایت خاموشی سے علمی امور میں مشغول رہتے تھے۔صدر شعبہ پروفیسر نعیم الحسن اثری نے کہاکہ مرحوم عربی زبان کی ایک باکمال شخصیت تھی ، ان کا انتقال ایک بڑا سانحہ ہے۔ڈاکٹر مجیب اختر نے کہاکہ مرحوم کو عربی، انگلش اور اردو زبان پر دسترس حاصل تھی ، آپ کے والد سید محمد عبد الخالق نقوی بھی اپنے زمانے کے عربی زبان کے جید عالم تھے،مرحوم نے دہلی یونیورسٹی سے عربی زبان میں ایم اے کیا آپ کے اساتذہ میںپروفیسرخورشیداحمد فارق اور پروفیسر سلیمان اشرف شامل ہیں۔آپ سنجیدہ مزاج اور شیریں مقال تھے۔شعبۂ اردوسینٹ اسٹیفنز کالج کے استاذ ڈاکٹر شمیم احمد نے بھی اظہار تعزیت کرتے ہوئے مرحوم کے اوصاف حمیدہ کا ذکر کیا۔ تعزیتی نشست سے ڈاکٹر محمد اکرم، ڈاکٹر اصغر محمود نے بھی خطاب کیا۔اس موقع پر شعبہ کے اساتذہ ، ریسرچ اسکالرس اورطلبہ واسٹاف موجودتھے۔دعاء مٖغفرت کے ساتھ تعزیتی نشست اختتام پذیر ہوئی۔قابل ذکر ہے کہسیدمحمد افضل نقوی کا گزشتہ روز طویل علالت کے بعد جسولہ وہار میں واقع رہاش گاہ پر 14فروری کو انتقال ہوگیا، ان کی تدفین نظام الدین میں واقع پنج پیران قبرستان میں عمل میں آئی۔آپ کے والد سید محمد عبد الخالق نقویبھی آل انڈیا ریڈیوسے عرصہ تک وابستہ رہے۔آپ کے خسرعبد اللہ ولی بخش قادری جامعہ کے شعبۂ تعلیم کے اچھے استاذ تھے۔مرحوم کے پسماندگان میں اہلیہ، دو بیٹے او رایک بیٹی شامل ہیں۔اہلیہ رخسانہ نقوی کرسینٹ اسکول سے ریٹائرڈ ہیں ۔