صنعتکار راجیو بجاج سے راہل کی گفتگو،حکومت پر تنقید

نئی دہلی:کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی نے لاک ڈاؤن کے حوالے سے ایک بار پھر مرکزی حکومت کو نشانہ بنایا ہے۔ بجاج آٹو کے ایم ڈی راجیو بجاج سے گفتگو کے دوران راہل نے کہا کہ ناکام لاک ڈاؤن کے بعد مرکزی حکومت نے پنے پیر پیچھے کھینچے۔ سخت لاک ڈاؤن نے معیشت کو بہت نقصان پہنچایا ہے۔راہل گاندھی اور راجیو بجاج کے مابین ملک کے حالت پر بات چیت ہوئی۔ اس دوران راہل نے کہاکہ یہ بہت عجیب بات ہے۔ مجھے نہیں لگتا کہ کسی نے سوچا بھی تھا کہ دنیا اس طرح بند ہوجائے گی۔ مجھے نہیں لگتا کہ دنیا جنگ کے دوران بھی بند تھی۔ پھر بھی چیزیں کھلی ہوئی تھیں۔”یہ ایک انوکھا اور تباہ کن دور ہے۔اسی دوران صنعتکار راجیو بجاج نے کہا کہ کورونا بحران سے نمٹنے کے تناظر میں ہندوستان نے مغربی ممالک کی طرف دیکھا اور سخت تالا بندی کرنے کی کوشش کی، جس سے نہ تو انفیکشن کا پھیلا ختم ہوا بلکہ معیشت تباہ ہوگئی۔کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی کے ساتھ بات کرتے ہوئے راجیو بجا ج نے یہ بھی کہا کہ بہت سارے اہم لوگ بولنے سے ڈرتے ہیں اور ایسی صورتحال میں ہمیں رواداری دکھانے اور حساس ہونے کے لئے ہندوستان میں کچھ چیزوں کو بہتر بنانے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہاکہ سرکار نے ایک سخت لاک ڈاؤن نافذ کرنے کی کوشش کی جس میں خامیاں بھی تھیں۔اس لیے ہمیں دونوں طرف سے نقصان پہنچا۔ اس طرح کے لاک ڈاؤن کے بعد وائرس موجود ہوگا۔ سرکار اس وائرس کے مسئلے سے نمٹ نہیں سکی۔بلکہ اس کے برعکس معیشت تباہ ہوگئی۔ میرے خیال سے پہلا مسئلہ لوگوں کے ذہنوں سے خوف نکالنے کا ہے۔ اس بارے میں واضح گفتگو ہونی چاہئے۔حکومت کی طرف سے اعلان کردہ معاشی پیکیج کے بارے میں بجاج نے کہا کہ دنیا کے بہت سے ممالک میں جو حکومتیں دے چکی ہیں ان میں سے دو تہائی عوام کے ہاتھ میں چلی گئیں۔ لیکن ہمارے یہاں صرف 10 ہی لوگوں کے ہاتھ میں گیا ہے۔

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*