سچن تندولکرنے اعزازکی توہین کی،بھارت رتن واپس لیاجائے،شیوانندتیواری کاتیکھاحملہ

پٹنہ:بھارت رتن سچن تندولکرنے بین الاقوامی پاپ اسٹار ریہانہ اور سماجی کارکن گریٹا تھنبرگ سے ہندوستان کے کسانوں کے احتجاج میں مداخلت نہ کرنے کی اپیل کی ہے۔ آر جے ڈی کے قومی نائب صدر شیوانند تیواری نے سابق کرکٹر سچن تندولکرکوبھارت رتن ایوارڈ دینے کی مخالفت کی ہے۔ انہوں نے واضح طور پر کہا کہ بھارت رتن ایسے لوگوں کونہیں دیا جانا چاہیے ، جو پیشہ ور ہیں۔ ان کے مطابق سچن ایک پیشہ ور کھلاڑی ہیں ، وہ ہر کام کے لیے پیسہ لیتے ہیں۔ بھارت رتن سے نوازے جانے کے بعد بھی وہ تجارتی اشتہارکرتے ہیں۔ ایسے لوگوں سے بھارت رتن واپس لیا جانا چاہیے۔ وہ ملک کے اعلیٰ اعزاز کی توہین کررہے ہیں۔ماسٹر بلاسٹر سچن تندولکر نے سوشل میڈیا پر لکھا کہ بھارت کی خودمختاری سے سمجھوتہ نہیں کیا جاسکتا۔ غیر ملکی قوتیں صرف دیکھ سکتی ہیں لیکن حصہ نہیں لے سکتی ہیں۔ ہندوستانی ہندوستان کوجانتے ہیں اور فیصلہ ہندوستانیوں کو لینا چاہیے۔ آئیے ہم ایک قوم کی حیثیت سے متحد ہوں۔ شیوانند تیواری سچن تندولکر کو بھارت رتن دینے کے بھی مخالف تھے جب 2013 میں سچن تندولکر کو بھارت رتن کے لیے نامزد کیا گیا تھا۔ شیوانند تیواری نے کہاہے کہ سچن تندولکر سے قبل دھیان چند کوبھارت رتن دینا چاہیےتھا۔ دھیان چند نے تین بار ہندوستان کو اولمپکس جتایا تھا جبکہ سچن تندولکر رقم کے بدلے کھیلتے تھے۔ وہ ابھی بھی اشتہار کرکے پیسہ کما رہے ہیں۔ یہ کرکے ، وہ بھارت رتن کی توہین کررہے ہیں۔سچن تندولکر پہلے کھلاڑی ہیں جنھوں نے بھارت رتن حاصل کیا تھا۔ 2013 میں صدر پرنب مکھرجی نے سچن تندولکرکوبھارت رتن سے نوازاتھا۔