سابق ایل جے پی رہنما کاچراغ پاسوان پر جان سے مارنے کا الزام،دراج کرائی ایف آئی آر

پٹنہ:ایل جے پی کے سابق رہنما کیشو سنگھ نے چراغ پاسوان کو جان سے مارنے کی دھمکی دینے کا الزام عائد کیا ہے۔ انہوں نے پٹنہ کے شاستری نگر پولیس اسٹیشن میں چراغ پاسوان کے خلاف ایف آئی آر بھی درج کروائی ہے۔ اس کے علاوہ انہوں نے کہا کہ انہوں نے نکسلیوں کی حمایت حاصل کی اور 2014 کے لوک سبھا انتخابات جیتنے کے لیے ان سے ہاتھ ملایا ۔ کیشو سنگھ نے الزام لگایا ہے کہ چراغ پاسبان نے امر آزادنام کے اپنے ایک ساتھی کے کے ذریعہ جان سے مار نے کی ھمکی دی ہے۔ دراصل 2 دن پہلے کیشو سنگھ نے دعوی کیا تھا کہ جنوری میں لوک جن شکتی پارٹی منقسم ہوجائے گی۔ انہوں نے الزام لگایا کہ چراغ پاسوان ایک نجی لمیٹڈ کمپنی کی طرح اپنی پارٹی چلا رہے ہیں جہاں دیگر رہنماؤں کی شمولیت نہیں ہوتی ہے۔کیشو سنگھ کا کہنا ہے کہ لوک جن شکتی پارٹی میں جمہوریت نہیں ہے۔ نہ ہی پارٹی میں ممبران پارلیمنٹ اور نہ ہی ایم ایل اے سے پوچھا جاتا ہے۔ پارٹی میں تمام فیصلے یکطرفہ طور پر کیے جارہے ہیں۔ جب میں 2 دن پہلے کشن گنج میں تھا تو رات کو مجھے امر آزاد نامی شخص کا فون آیا جس نے مجھے دھمکی دی۔ دوسری طرف لوک جن شکتی پارٹی نے کیشو سنگھ کی طرف سے لگائے گئے تمام الزامات کو مسترد کردیا ہے۔ پارٹی کے ترجمان کالو سنگھ نے کہا کہ چراغ پاسوان پر لگائے گئے تمام الزامات بے بنیاد ہیں۔کیشو سنگھ نے میڈیا کی سرخیوں میں رہنے کے لیے ایسا الزام لگایا ہے۔ اس کے خلاف ہتک عزت کا مقدمہ درج کریں گے۔واضح رہہے کہ چراغ پاسوان نے کیشو سنگھ کو پارٹی سے نکال دیا ہے۔