سابق سی بی آئی چیف رنجیت سنہا کی کورونا سے موت

نئی دہلی: مرکزی تفتیشی بیورو کے سابق چیف 68 سالہ رنجیت سنہا کا جمعہ کی صبح انتقال ہوگیا۔ وہ جمعرات کو کورونا متاثر ہوئے تھے۔ سی بی آئی میں ان کے دور اقتدار کے کچھ سال کافی متنازعہ رہے اور وہ بہت سارے معاملات پر بحث میں آتے رہے ۔ وہ بہار کیڈر کے آئی پی ایس افسر تھے اور 1974 بیچ سے تھے۔2012 میں انہیں سی بی آئی کا چیف بنایا گیا تھا۔ اس سے پہلے انہوں نے ہند تبت ۔پولیس فورس ، ریلوے پروٹیکشن فورس اور پٹنہ سی بی آئی میں کئی سینئر عہدوں پر کام کیا تھا۔اس وقت سنہا سی بی آئی کے چیف تھے جب سپریم کورٹ نے مرکزی ایجنسی کو ’اپنے مالک کی بولی بولنے والاپنجرے کاطوطا ‘قرار دیا تھا۔ سی بی آئی پر کئی سال تک کو تھپّہ لگارہا ہے۔ عدالت کے اس حکم پر سنہا نے کہا تھا کہ جو بھی سپریم کورٹ نے کہا ہے وہ درست ہے۔ ان کے خلاف اختیارات کے ناجائز استعمال کے معاملے کی بھی تحقیقات کی گئی ، جس میں ان کے خلاف الزام لگاتھا کہ انہوں نے نجی کمپنیوں کو کوئلے کے شعبے کے تقسیم میں رشوت دیے جانے کے بدعنوانی کے معاملے میں جانچ کوروکنے کی کوشش کی تھی۔ یہ معاملہ اس وقت ہوا جب منموہن سنگھ کی حکومت تھی۔سپریم کورٹ کے حکم کے بعد سی بی آئی نے اپنے سابق بوس کے خلاف 2017 میں مقدمہ درج کیا تھا۔ ان پر کوئلہ گھوٹالہ معاملے میں ملزموں کے ساتھ اپنے گھر میٹنگ کرنے کا الزام تھا۔