رنجیت رنجن نے 5 ریاستوں میں انتخابات سے قبل کانگریسی قائدین کی میٹنگ کو سا زش قرار دیا

نئی دہلی:کانگریس کی سینئر رہنما اور لوک سبھا کے سابق رکن پارلیمنٹ رنجیت رنجن نے پارٹی کے جی 23 لیڈروں کو نشانہ بنایا۔ انہوں نے کہا کہ 5 ریاستوں میں انتخابات سے قبل سینئر رہنماؤں کا رویہ پارٹی کے خلاف سازش ہے۔ وہ یہ کام صرف راجیہ سبھا کی نشست حاصل کرنے کے لیے کیا جارہا ہے ۔انہوں نے کہا کہ کچھ لوگ راجیہ سبھا نشست کے لیے پارٹی پر تنقید کر رہے ہیں ، جبکہ پارٹی نے ان جی 23 رہنماؤں کو بہت کچھ دیا ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ رہنما جو یہ کہتے ہیں کہ کانگریس پارٹی پچھلے 30 سالوں سے مسلسل زوال کی طرف جارہی ہے ، ان سے سوال کیا جانا چاہئے کہ کیا یہ جی 23 رہنما اس کے ذمہ دار نہیں ہیں؟ کیا ان لوگوں نے کانگریس پارٹی کو کمزورنہیں کیا؟ انہوں نے کہا کہ کانگریس پارٹی کی کمزوری کا الزام گاندھی خاندان پر لگانا غلط ہے۔ انہوں نے پارٹی کی اس حالت کے لیے ان جی 23 رہنماؤں کو مورد الزام ٹھہرایا ، کیوں کہ وہ اپنی جوانی سے ہی پارٹی کے ساتھ تھے اور انہوں نے پارٹی کو بچانے کے لیے کچھ بھی نہیں کیا۔انہوں نے کہا کہ آج جب ہمارے نوجوان رہنماؤں کو سینئر قائدین کی رہنمائی کی ضرورت ہے۔ ان کے ساتھ کام کرنے کی ضرورت ہے۔ اس وقت جی -23 رہنما عوامی پلیٹ فارم پر پارٹی کے خلاف بیان بازی کر رہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ جموں وکشمیر میں نا م نہاد امن کانفرنس صرف پارٹی کے خلاف بولنے کے لیے منعقد کی گئی تھی۔کانگریس ہائی کمان سے ناراض یہ سینئر رہنما جی -23 کے نام سے جانے جاتے ہیں۔کانگریس کی عبوری صدر سونیا گاندھی کو لکھے گئے خط میں انہوں نے پارٹی چلانے کے طریقۂ کار سے متعلق سوال اٹھایا تھا۔