رنجن گوگوئی رام مندر کے حق میں سب سے زیادہ معاون ثابت ہوئے،ان کواجودھیامدعونہ کرناناانصافی:ادھیررنجن چودھری

نئی دہلی:کانگریس کے ممبرپارلیمنٹ ادھیر رنجن چودھری نے ایودھیا میں رام مندر کی تعمیرکے لیے 5 اگست کو ہونے والی ’’بھومی پوجا‘‘کے لیے ملک کے سابق چیف جسٹس رنجن گوگوئی کومدعوکرنے کامطالبہ کیا ہے۔ فی الحال گذشتہ سال راجیہ سبھا کے رکن پارلیمنٹ رنجن گوگوئی کی سربراہی میں سپریم کورٹ کے پانچ ججوں کے بنچ نے ایودھیا تنازعہ میں رام مندرکے حق میں فیصلہ سنایا تھا۔ اس کے بعدہی ریٹائرمنٹ کے ساتھ انھیں بی جے پی نے راجیہ سبھاپہونچادیا۔ادھیر رنجن نے کہاہے کہ اگر گوگوئی کوبھومی پوجن کرنے کی دعوت نہ دی گئی تویہ ان کے ساتھ نا انصافی ہوگی۔اپنے بیان میں لوک سبھا میں کانگریس پارٹی کے لیڈرادھیررنجن چودھری نے کہاہے کہ مندرکی تعمیرکے لیے بھومی پوجن کے حوالے سے عام لوگوں میں خوشی اور مسرت کا ماحول ہے۔کورونا کی وجہ سے اس تقریب میں زیادہ لوگوں کودعوت نامہ دینا مشکل ہے ،صنعت کار اس تقریب میں آئیں گے،حکمران جماعت کے لیڈران آئیں گے ، تحریک کے لوگوں کو بلایا جائے گا ، تو پھر رنجن گوگوئی بھی کیوں نہیں۔چیف جسٹس جو اس فیصلے میں سب سے زیادہ معاون تھے ، انھیں اس تقریب میں مدعوکرنے کی ضرورت ہے اوریہ بھی اچھالگے گا۔ بھومی پوجن پروگرام کے منتظمین انہیں فون کریں ورنہ سابق چیف جسٹس کے ساتھ انصاف نہیں ہوگا۔