قومی تعلیمی پالیسی بچوں کو مستقبل کی ضرورتوں کے مطابق تیار کرے گی:کووند

صدر جمہوریہ نے یومِ اساتذہ کے موقعے پر اساتذہ کو قومی ایوارڈ سے نوازا، ڈیجیٹل تعلیم پر اساتذہ کی ستائش
نئی دہلی:صدر جمہوریہ ہندرام ناتھ کووند نے یوم اساتذہ کے موقع پر آج پہلی بار ورچول طریقے سے منعقدہ ایوارڈتقریب میں ملک بھرکے 47 اساتذہ کو قومی ایوارڈ سے نوازا۔ صدر جمہوریہ نے اپنی تقریر میں ایوارڈ یافتگان کو مبارکباد دی اور اسکولی تعلیم میں معیاری اصلاح کے لئے اساتذہ کے ذریعے کئے گئے اقدامات کی ستائش کی۔ انھوں نے کہا کہ قومی ایوارڈ یافتگان میں تقریباً 40 فیصد خواتین ہیں۔ انھوں نے اساتذہ کے طور پر خواتین کے ذریعے نبھائے گئے رول کی تعریف کی۔سابق صدر جمہوریہ ڈاکٹر ایس رادھا کرشنن کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے صدر جمہوریہ کووندنے کہا کہ وہ ایک دوراندیش انسان، رہنما اور اس سے بھی بڑھ کر ایک غیرمعمولی استاد تھے۔ انھوں نے کہا کہ یوم اساتذہ کی شکل میں منایاجانے والاان کایوم پیدائش ملک کی ترقی میں ان کے تعاون کی محض ایک علامت اور پوری اساتذہ برادری کے لیے احترام کی نشانی بھی ہے۔ یہ موقع اساتذہ کی عہد بستگی اور طلبا کی زندگی میں ان کے اعلیٰ ترین تعاون کے لیے ہمارے اساتذہ کو اعزاز دینے کا موقع بھی فراہم کرتا ہے۔انھوں نے کہاکہ یہ اساتذہ کی عہدبستگی ہی ہے جو کسی بھی اسکول کی بنیاد ہے۔ انھوں نے کہا کہ اساتذہ معمار قوم ہیں، وہ بچوں کو علم کی فراہمی اور ان کی کردار سازی میں اہم رول ادا کرتے ہیں۔صدر جمہوریہ کووند نے کوویڈ کی وبا کے چیلنج بھرے وقت میں ڈیجیٹل ٹیکنالوجی کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ ہمارے اساتذہ اس تکنیک کا سہارا بچوں تک اپنی رسائی بنانے میں لے رہے ہیں۔ نئی تکنیک کے ذریعے اس تعلیمی عمل کو اپنانے میں اساتذہ کی صلاحیت مندی کی ستائش کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ سبھی اساتذہ کے لیے یہ اہم ہے کہ وہ ڈیجیٹل تکنیک کے شعبے میں اپنی صلاحیتوں کو بڑھائیں اور اسے اَپڈیٹ کریں، تاکہ تعلیم کو مزید مؤثر بنایا جاسکے اور طلبا کو بھی نئی تکنیکوں میں ماہر کیا جاسکے۔انھوں نے کہا کہ نئی تعلیمی پالیسی بچوں کو عصری ضرورتوں کے مطابق تیار کرے گی۔مرکزی وزیر تعلیم جناب رمیش پوکھریال ’نشنک‘ نے اس تقریب میں استقبالیہ تقریرکی جب کہ وزیرمملکت برائے تعلیم سنجے دھوترے نے سب کا شکریہ ادا کیا۔