’کیپٹن‘ خیمے کے ممبران پارلیمنٹ نے سدھو کو بتایا’جوکر‘

نئی دہلی: پنجاب کانگریس میں جاری تنازعہ ختم ہوتا دکھائی نہیں دے رہاہے۔ وزیراعلی کیپٹن امریندر سنگھ اور نوجوت سنگھ سدھو ایک دوسرے کو شکست دینے کی پوری کوشش کر رہے ہیں۔ سدھو وزیر اعلی کے گڑھ پٹیالہ پہنچ گئے۔ سدھو ایم ایل اے مدن لال کے گھر گئے اور ان سے ملاقات کی۔ سدھو کا یہاں پرتپاک استقبال کیا گیا۔ دوسری جانب دہلی میں کانگریس کے ممبر پارلیمنٹ پرتاپ سنگھ باجوہ کی رہائش گاہ پر پنجاب کانگریس کے ممبران پارلیمنٹ کا اجلاس ہوا۔ ان سب کے بیچ کیپٹن خیمے سے تعلق رکھنے والے پنجاب کانگریس کے ممبران پارلیمنٹ نے سدھو سے جوکر قرار دیتے ہوئے انہیں پنجاب کانگریس کا صدر نہ بنانے کا مطالبہ کیا ہے۔پرتاپ سنگھ باجوہ نے گفتگو میں کہا کہ ہم نے ہمیشہ سونیا گاندھی اور راہل گاندھی کے فیصلے کو قبول کیا ہے، ابھی تک کوئی فیصلہ نہیں آیا ہے۔ کیپٹن امریندر سنگھ نے یہ بھی کہا کہ کانگریس صدر کا فیصلہ حتمی ہوگا۔
باجوہ نے کہا کہ پنجاب میں دو گروپ نہیں ہیں۔ سونیا گاندھی اور راہل گاندھی نے کیپٹن امریندر سنگھ کو وزیر اعلی بنایا ہے، جو بھی پنجاب کانگریس کا صدر بنے گا وہ ان کے فیصلے سے ہوگا۔ پوری کانگریس پارٹی ہمیشہ ساتھ رہی ہے اور ساتھ رہے گی،ہم مل کر اگلے سال انتخابات لڑیں گے اور جیتیں گے، جو بھی صدر بنے گا وہ وزیراعلیٰ کے ساتھ مل کر کام کرے گا۔اس سوال کے جواب میں کہ کیا آپ کیپٹن امریندر سنگھ یا نوجوت سنگھ سدھو کی حمایت میں ہیں؟ انہوں نے کہاکہ ہم سونیا گاندھی اور راہل گاندھی کی حمایت میں ہیں، ہم ان لوگوں کے ساتھ ہیں جن کا سر پر ہاتھ ہے۔ کل پنجاب کانگریس کے صدر سنیل جاکھر نے تمام اراکین اسمبلی اور ضلعی سربراہان کا اجلاس طلب کیا ہے۔ ذرائع کے مطابق اس میٹنگ کا مقصد سدھو کے حق میں فضا پیدا کرنا ہے۔