پرائیویٹ اسکولوں سے اس سال 2.70 لاکھ بچے سرکاری اسکولوں میں آئے : اروند کیجریوال

نئی دہلی: دہلی میں ’دیش کے مینٹرز‘ پروگرام کے آغاز کے دوران دہلی کے وزیراعلیٰ اروند کیجریوال نے کہا کہ کل 16 لاکھ بچے دہلی کے سرکاری اسکولوں میں زیر تعلیم تھے ، کئی سالوں سے اتنے ہی تھے ۔ لیکن اس سال یہ بڑھ کر 18.70 لاکھ تک پہنچ گئی ہے۔ اس سال دہلی کے پرائیویٹ اسکولوں سے 2.70 لاکھ بچوں نے نام کٹوا کر سرکاری اسکولوں میں داخلہ لیا۔ یہ تمام لوگوں کی محنت کا ثمرہ ہے۔ یہ ظاہر کرتا ہے کہ اگر آپ کا ارادہ پختہ ہو تو سب کچھ ہو سکتا ہے۔ جب ہم نے کچھ دن پہلے حب الوطنی کا کورس شروع کیا تو لوگوں نے کہنا شروع کیا کہ کیا حب الوطنی سکھائی جا سکتی ہے؟ جب ہم نے دہلی کے سرکاری اسکولوں میں ہیپی نیس کا نصاب شروع کیا تو لوگوں نے کہنا شروع کیا کہ کیا خوشی سکھائی جا سکتی ہے؟ امریکہ کے صدر کی اہلیہ دہلی کے سرکاری اسکول میں ہیپی نیس کی کلاسز دیکھنے آئی تھیں۔ انٹرپرینیورشپ کا نصاب چل رہا ہے ، تاکہ بچے نوکری کے متلاشی نہیں بلکہ نوکری دینے والے بنیں۔اروند کیجریوال نے کہا کہ یہ اس پروگرام میں ہوتا ہے کہ جب بچہ نویں جماعت میں آتا ہے تو اس پر مختلف قسم کے دباؤ ہوتے ہیں۔ ہمیں ان بچوں کا بڑا بھائی ، دوست ، بہن ملے جن کے ساتھ بچہ اپنے دل کی بات کر سکے۔ دل کی بات بتانے سے اس کے دل بوجھ ہلکا ہو جاتا ہے اور وہ ذہنی دباؤ سے بھی نکل جاتا ہے۔ جو بھی ہمارے مینٹرز بنیں گے وہ نہ صرف دہلی بلکہ ملک سے بنیں گے ۔ سرپرست کو صرف بچے سے فون پر بات کرنی ہوتی ہے۔ دن میں 10 منٹ کافی ہیں۔ اگر ایک اچھا سرپرست ملے گا ، تو بچے کو معلوم ہوجائے گا کہ وہ زندگی میں کیا کر سکتا ہے۔ اس پروگرام سے توقع کی جاتی ہے کہ سرپرست بچے کو اصول اور نظریات سے بھی آگاہ کرے گا۔ اس پلیٹ فارم کے ذریعے میں ملک کے تمام نوجوانوں اور بزرگوں سے اپیل کرتا ہوں کہ یہ کام کر کے آپ قوم کی تعمیر کا سب سے بڑا کام کر رہے ہیں۔ اگر آپ کی مدد سے ایک بچہ بھی اپنے خوابوں کو پورا کرتا ہے اوروہ ایک اچھا شہری بن جاتا ہے ، تو قوم کی تعمیر میں آپ نے بہت اچھا کام کیا ہے۔ ایسا کرنے سے پورا ملک ایک خاندان بن جائے گا۔