پریس کی آزادی پر کوئی بھی حملہ قومی مفادات کے لیے تباہ کن:وینکیا نائیڈو

نئی دہلی:نائب صدرجمہوریہ ہندایم وینکیا نائیڈو نے کہا ہے کہ پریس کی آزادی پر کوئی بھی حملہ قومی مفادات کے لیے تباہ کن ہے اور اس کی ہرایک کے ذریعہ مخالفت کی جانی چاہیے۔پریس کے قومی دن کے موقع پر پریس کونسل آف انڈیا کے ذریعہ منعقدہ کووڈ-19 عالمی وباکے دوران میڈیا کے رول اور میڈیا پر اس کے اثرات کے موضوع پر ایک ویبینار کے لیے اپنے ایک پہلے سے ریکارڈ کیے گئے ویڈیو پیغام میں نائب صدر جمہوریہ نے کہا کہ ایک آزاد اور بے خوف پریس کے بغیر جمہوریت برقرار نہیں رہ سکتی۔انہوں نے کہا کہ بھارت میں پریس ہمیشہ جمہوریت کے تحفظ اور اسے مستحکم کرنے کا ذریعہ رہی ہے۔نائب صدر جمہوریہ نے زور دے کر کہا کہ ایک آزاد اور فعال میڈیا بہت اہم ہیجب کہ ایک آزاد عدلیہ جمہوریت کو مستحکم اور قانون کی بالادستی کومضبوط کرتا ہے۔صحافت کو ایک مقدس مشن قرار دیتے ہوئے انہوں نے عوام کو بااختیار بنانے اور قومی مفادات کو فروغ دینے میں پریس کے اہم کردار کی ستائش کی۔اس کے ساتھ ہی وینکیانائیڈو نے مشورہ دیاہے کہ میڈیا کو اپنی جانب سے انصاف پسند، بامقصد اور اپنی رپورٹنگ میں درست ہونا چاہیے۔انہوں نے مزیدکہا کہ سنسنی خیزی سے گریز کرنا چاہیے اور خبروں میں نظریات کی ملاوٹ کے رجحان سے بچنے کی ضرورت ہے۔انہوں نے یہ بھی کہا کہ ہماری رپورٹنگ میں ترقیاتی خبروں کے لیے زیادہ سے زیادہ جگہ دی جانی چاہیے۔نائب صدر جمہوریہ نے کووڈ-19عالمی وبا کے پیش نظر صف اول کے جنگجوکی طرح کام کرنے اور تمام واقعات کی بلارکاوٹ اطلاعات دینے کے لیے اخبارات اور الیکٹرانک میڈیا کے صحافیوں کی ستائش کی۔انہوں نے کہا کہ ان صحافیوں نے وبا سے متاثرہونے کے خوف کے بغیر پوری محنت سے کام کیا ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ میں ہر اس صحافی اور کیمرہ مین اور دیگر افراد کی زبردست ستائش کرتا ہوں جو خبروں اور معلومات کی فراہمی کے لیے مسلسل کوششیں کرتے رہے ہیں۔نائب صدرجمہوریہ نے عالمی وبا کے دوران، خاص طور پر ایسے میں جب کہ فرضی خبروں کی بھرمار ہے، درست وقت پر درست معلومات فراہم کرنے کی اہمیت پر زور دیا۔غیر مصدقہ اور بے بنیاد دعوؤں کے خلاف تحفظ کی ضرورت کو اجاگر کرتے ہوئے نائب صدر جمہوریہ نے کہا کہ اس سلسلے میں عوام میں بیداری پیدا کرنے میں میڈیا کا بہت بڑا رول ہے۔