پی ایف آئی لیڈر پر یوپی پولیس کی نظر،رؤف شریف کواپنی تحویل میں لے گی

لکھنؤ:کیرالہ کے تری وندرم ایئر پورٹ سے ہفتے کے روز گرفتار ہونے والے پاپولر فرنٹ آف انڈیا (پی ایف آئی) کے مبینہ لیڈررؤف شریف کوپولیس حراست میں لے گی اورہاتھرس کیس میں پوچھ گچھ کرے گی۔اترپردیش کے ایڈیشنل ڈائریکٹر جنرل پولیس (لا اینڈ آرڈر) پرشانت کمار نے اتوار کے روز بتایاہے کہ ہاتھرس واقعے میں رؤف مطلوب تھا اور اسے لانے کے لیے ایک ٹیم بھیجی جائے گی۔کمار نے بتایا کہ ای ڈی کی کارروائی مکمل ہونے کے بعد پولیس ٹیم جائے گی۔قابل ذکر ہے کہ ستمبر میں ہاتھرس میں ایک نوجوان دلت لڑکی کے ساتھ مبینہ عصمت دری اور قتل کے بعد ریاستی ماحول گرماگیاتھا۔ تب وزیراعلیٰ یوگی آدتیہ ناتھ نے کہاکہ وہاں کے ماحول کو خراب کرنے کی ایک بڑی سازش کی گئی ہے۔ پولیس نے متھرا تھانے میں اس معاملے میں مقدمہ درج کیاتھاجس میں رؤف بھی ایک ملزم ہے۔پولیس کے مطابق رؤف کا تشدد بھڑکانے کی سازش میں مبینہ کردار سامنے آیا ہے۔ اتر پردیش پولیس نے گذشتہ 18 نومبر کو رؤف شریف کے خلاف بھی لک آئوٹ نوٹس جاری کیا تھا۔رؤف کے بارے میں کہا جاتا ہے کہ وہ فرنٹ آف انڈیا کا جنرل سکریٹری ہے ، جو پی ایف آئی کی طلبہ ونگ ہے ، جس کے چارساتھیوں کو پولیس نے متھراکے علاقے سے قریب دو ماہ قبل گرفتار کیا تھا۔ پولیس نے تھانہ میں ان نوجوانوں کے خلاف سنگین دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا تھا جس میں رؤف کو بھی مطلوب تھا۔پولیس ذرائع نے بتایاہے کہ رؤف کو ہفتہ کے روزانفورسمنٹ ڈائریکٹوریٹ (ای ڈی) کی ٹیم نے تریوندرم ائیرپورٹ سے اس وقت حراست میں لیا جب وہ بیرون ملک فرار ہونے کی تیاری کر رہا تھا۔پولیس کے مطابق پی ایف آئی کے گرفتار افراد رئوف کے کہنے پرہاتھرس جارہے تھے۔ان نوجوانوں سے تفتیش کے دوران پولیس کو رؤف کے بارے میں بھی خصوصی معلومات ملی ہیں۔پولیس کے مطابق رؤف کو بیرون ملک سے کروڑوں روپے ملے ہیں۔