Home نقدوتبصرہ مسٔلہ فلسطین اور عالم اسلام کے مستقبل پر چار اہم کتابیں- شکیل رشید

مسٔلہ فلسطین اور عالم اسلام کے مستقبل پر چار اہم کتابیں- شکیل رشید

by قندیل

 

مسٔلۂ فلسطین کے کئی پہلو ہیں ؛ مذہبی ، تمدنی ، معاشرتی ، سیاسی ، معاشی اور جنگی ۔ چند پہلو مزید ہیں ؛ ظلم و ستم ، قبضہ ، ناانصافی ، دفاع ، مہاجرت اور غیرقانونی آبادکاری ۔ دنیا کی نظر میں یہ مسٔلہ متنازعہ بھی ہے ، اور باعثِ مذمت بھی ، اور دنیا کے اُن ممالک کو عریاں کرنے والا بھی جو بظاہر جمہوریت ، آزادیٔ تحریر و تقریر اور انصاف کا نعرہ بلند کرتے ہیں ، مگر بباطن خباثت سے بھرے ہوئے ہیں ، اور اب یہ مکمل طور پر لوگوں کے سامنے ننگے ہو گیے ہیں ۔ ہم مسلمان اس مسٔلہ کو بس ایک ہی نظر سے دیکھنے کے عادی ہیں کیونکہ ہم نہ فلسطین کے بارے میں زیادہ جانتے ہیں اور نہ ہی ہمیں یہ پتہ ہے کہ مسٔلہ ہے کیا ؟ اسرائیل کیسے اور کیوں فلسطین کی سرزمین پر قابض ہوا ، اور اس کی پشت پر کون کون کھڑا ہوا ہے ؟ افسوس تو یہ ہے کہ مغرب کی تقلید میں ہم بھی اُن فلسطینی تنظیموں کو ، جو فلسطین کی آزادی کے لیے سرگرم ہیں ، دہشت گرد مانتے اور منواتے ہیں ! اور اس لاعلمی اور مغرب کی اندھی تقلید کی بنیادی وجہ علم کا نہ ہونا ہے ، اور علم کے نہ ہونے کی وجہ کتابوں کے مطالعے سے دوری ہے ۔ ضروری ہے کہ ہم اپنے مسائل کو جانیں اور سمجھیں ، اور اس کے لیے کتابیں پڑھیں ۔ جب سے غزہ کی جنگ شروع ہوئی ہے تب سے اچھی خاصی تعداد میں لوگ اس مسٔلے کو جاننے میں دلچسپی لے رہے ہیں ، ایسے لوگوں کو چار اہم کتابوں سے متعارف کرانا ہے ، جو ضخامت میں کم مگر اپنے اندرمعلومات کا ایک خزانہ لیے ہوئے ہیں ۔ پہلی کتاب کا نام ہے ’ مسٔلۂ فلسطین ‘ جو چھوٹے حجم کی 121 صفحات پر مشتمل ہے ۔ مصنف ڈاکٹر محمد مشتاق ہیں ۔ یہ کتاب دو پہلوؤں پر بحث کرتی ہے ، ایک ہے ’ مذہبی تناظر ‘ اور دوسرا ہے ’ تنازؑعہ جو اقوام متحدہ میں پڑا ہوا ہے ‘ اور اس حوالے سے ’ اسرائیل کہاں کھڑا ہوا ہے ۔‘ یہ دونوں اہم پہلو ہیں ، اس لیے کہ غیروں کی طرح بہت سارے مسلمان بھی اس مغالطے میں جی رہے ہیں کہ فلسطین کا مسٔلہ مذہبی نہیں صرف زمینی ہے ۔ ڈاکٹر صاحب نے بڑی وضاحت سے سمجھایا ہے کہ یہ زمینی کے ساتھ ساتھ بہت ہی اہم مذہبی مسٔلہ بھی ہے ۔ کتاب تین حصوں میں ہے ، دوضمیمے ہیں ۔

 

دوسری کتاب ’ طلوعِ مشرق اور غروبِ مغرب ‘ کے عنوان سے ہے ۔ یہ عربی دانشور محمد مختار شنقیطی کی مختصر عربی کتاب کا ترجمہ ہے ، مترجم محی الدین غازی ہیں جو بہترین نثار بھی ہیں اور بہترین مترجم بھی ۔ یہ کتاب راست مسٔلۂ فلسطین پر نہیں ہے ، یہ عالمِ اسلام کے حوالے سے عالمی سیاست پر ہے ، لیکن یہ عالمی سیاست میں مسلمانوں اور مسلم ممالک کے مستقبل کو سمجھنے کی ایک راہ سجھاتی ہے ۔ اس کتاب کا آغاز ’ پرجوش چینی آندھی ‘ سے کیا گیا ہے ، اور عالمِ اسلام کی تارتار ہوتی وحدت پر بات کرتے ہوئے مستقبل کے حوالے سے ’ کچھ خلاصے ‘ پیش کیے گیے ہیں ، اور یہ مشورہ دیا گیا ہے کہ ’’ عالمِ اسلام کا مستقبل اس پر موقوف ہے کہ اس کی سیاسی اور تہذیبی قیادت موجودہ زمانے میں عالمی قوتوں کی بدلتی پوزیشنوں سے صحیح آگاہی حاصل کرے ، نیز گہرے سیاسی شعور اور لطیف اسٹریٹیجیکل حس کے ساتھ ان کے ساتھ بہتر تعامل کرے ۔‘‘ یہ کتاب 72 صٖفحات پر مشتمل ہے ، قیمت 80 روپیے ہے ۔ تیسری کتاب کا نام ہے ’ فلسطین قرض اور فرض ‘ ۔ یہ کتاب ڈاکٹر محمد طارق ایوبی کی تحریر کردہ ہے ، جو عالمِ اسلام اور اس کے مسائل پر گہری نظر رکھتے ہیں ۔ کتاب 176 صفحات کی ہے اور قیمت 180 روپیے ہے ۔ کتاب ’ طوفانِ اقصیٰ ‘ سے شروع ہوتی ہے ، وہ طوفان جو غزہ کی حالیہ جنگ کا سبب بنا ہے ۔ ڈاکٹر صاحب نے قدس کو یہودیانے کی سازش ، اس کی دینی اہمیت اور یہود کے ساتھ مسلمانوں کی اصلی جنگ کے عنوانات سے ، مسٔلۂ فلسطین کو تفصیل کے ساتھ ہمارے سامنے پیش کر دیا ہے ۔ انہوں نے قرآن پاک کے فیصلہ کن موقف کو سامنے رکھا ہے کہ ’’ اللہ تعالیٰ زمین کا وارث اپنے نیک بندوں کو بناتا ہے ، اس کے نزدیک نسل اور جنس کی کوئی حیثیت نہیں ، اس کا کوئی فیصلہ حسب و نسب کی بنیاد پر نہیں ہوتا ، بلکہ وہ ایمان و عمل اور تقویٰ کا اعتبار کرتا ہے ۔‘‘ جبکہ یہودی فلسطین پر یہ کہہ کر دعویٰ کرتے ہیں کہ نسلی طور پر یہ ان کی ملکیت ہے ۔ وہ لکھتے ہیں کہ ’’ قضیہ فلسطین صرف ایک ملک اور ایک زمین کا مسئلہ نہیں ، یہ اسلام کا مسئلہ ہے ، تمام مسلمانوں کا مسٔلہ ہے ، مسجد اقصی یعنی حرم ثالث کا مسئلہ ہے ، تیسرے محترم و مقدس شہر بیت المقدس کا مسئلہ ہے ، اسلام کی سرزمین فلسطین کا مسئلہ ہے ، اس کی مکمل آزادی امت پر قرض ہے ، اس قرض کی ادئیگی فرض ہے ۔ ‘‘ یہ ایک لاجواب کتاب ہے ۔

 

چوتھی کتاب علامہ یوسف القرضاوی ؒ کی مشہور زمانہ کتاب ’ بیت المقدس مسلمانانِ عالم کا مسٔلہ ‘ ہے ۔ یہ کتاب قرآن ، احادیث اور دیگر ماخذ جیسے تورات و انجیل وغیرہ کے حوالوں سے سمجھاتی ہے کہ کیوں اور کیسے بیت المقدس عالمِ اسلام کا مسٔؒلہ ہے ، اور اس لحاظ سے فلسطین بھی عالمِ اسلام کا مسٔلہ ہوجاتا ہے ۔ یہ کتاب 112 صفحات پر مشتمل ہے ، قیمت 120 روپیے ہے ۔ یہ چاروں کتابیں ’ ہدایت پبلشرز ، نئی دہلی ‘ ( موبائل 9891051676 ) نے شائع کی ہیں ، انہیں ممبئی میں ’ مکتبہ جامعہ ‘ ( موبائل 9082835669) سے حاصل کیا جا سکتا ہے ۔

You may also like