اویسی کا یوپی دورہ،مسجداورمدرسے میں حاضری،اکھلیش یادوپرتنقید،کہا- 12 بار مجھے یوپی جانے سے روکا

وارانسی:منگل کے روزآل انڈیا مجلس اتحاد المسلمین (اے آئی ایم آئی ایم)کے صدر اسدالدین اویسی بابت پور ایئرپورٹ پہنچے۔یہاں ان کا خیرمقدم ہندوستانی سماج پارٹی کے رہنما سابق وزیر اوم پرکاش راج بھرنے کیا۔ یہاں اویسی نے سماج وادی پارٹی کے صدر اکھلیش یادو پر حملہ کرتے ہوئے کہا کہ انہیں ایس پی کے اقتدار میں 12 بار یوپی آنے سے روکاگیا۔ اس کے بعد اتحادکو مضبوط بنانے اور پوروانچل میں سیاسی زمین تلاش کرنے کے لیے دونوں رہنما جونپور اور اعظم گڑھ روانہ ہوگئے۔اویسی نے اکھلیش یادوکے مضبوط گڑھ میں دستک دی ، مسجد میں نماز پڑھی ،مدرسے میں ناشتہ کیا۔آئندہ اسمبلی انتخابات میں ذات پات کے حساب کتاب ٹھیک کیے جارہے ہیں۔ذات پات کے علاوہ اب سیاست مذہب کی بنیاد پرہونے لگی ہے ۔بی جے پی کی مذہبی سیاست پرتنقیدیں ہوتی رہی ہیں لیکن یہی کام اویسی بھی کرنے لگے توفرق کیارہ جاتاہے۔بی جے پی مندرسے مہم کی شروعات کرتی ہے تواویسی مسجداورمدرسہ سے انتخابی کھیل کھیل رہے ہیں۔مذہب پرمبنی یہ سیاست ملک کوکس طرف لے جائے گی اورمذہبی سیاست سے کسے فائدہ ہوگا،یہ واضح ہے۔مندرمیں پوجاسے سیاسی پیغام دیاجاتاہے تودوسری طرف اویسی مسجدمیں نمازکوبھی سیاسی بنانے کی کوشش میں ہیں اورمذہبی سیاست سے ریاست کاانتخابی منظرنامہ بدلناچاہتے ہیں۔وارانسی سے جون پور ، اعظم گڑھ جانے کا راستہ مکمل طور پر یادو اور مسلم اکثریت سمجھا جاتا ہے۔ اویسی یوپی دورے پرپہنچے ۔