نوبل انعام یافتہ ترک ادیب اورحان پاموک کے جنم دن پر ـ راشد بٹ

 

نوبل انعام یافتہ ترک ادیب اورحان پاموک کا آج 69 واں یوم پیدائش ہے۔
7 جون 1952ء ان کی تاریخ پیدایش ہےـ
پاموک کے مشہور ناولوں میں
سائلنٹ ہاوس (Silent House)
دا وائٹ کیسل (The White Castle)
دی بلیک بک (The Black Book)
دی نیو لائف (The new Life)
مائی نیم از ریڈ (My name is Red)
سنو (Snow)
دی میوزیم آف انوسینس (The Museum of Innocence)
آ سٹرینجنس ان مائی مائینڈ (A strangeness in my mind)
دی ریڈ ہیئرڈ وومین (The Red-Haired Women) شامل ہیں۔

2003ء میں پاموک نے اپنے ناول "مائی نیم از ریڈ” کے لیے IMPAC ڈبلن انعام جیتا، جس کی انعامی رقم ایک لاکھ یورو ہے۔ یہ پوچھے جانے پر کہ اس آخری ایوارڈ (جو ایک بڑی رقم پر مشتمل ہے) جیتنے سے ان کی زندگی اور کام پر کیا اثر پڑا، پاموک نے جواب دیا:
"جب سے میں ہر وقت کام کر رہا ہوں، میری زندگی میں کچھ بھی نہیں بدلا۔ میں نے تیس سال فکشن لکھنے میں گزارے ہیں۔ پہلے دس سالوں میں، مجھے پیسوں کی فکر تھی اور کسی نے نہیں پوچھا کہ میں نے کتنی رقم کمائی ہے۔ دوسری دہائی میں، میں نے پیسہ خرچ کیا اور کوئی بھی اس کے بارے میں نہیں پوچھ رہا تھا اور میں نے گذشتہ دس سال ہر ایک سے یہ سننے کی توقع کرتے ہوئے گزارے ہیں کہ میں یہ پیسہ کیسے خرچ کرتا ہوں، جو میں نہیں بتاؤں گا۔”

پاموک کولمبیا یونیورسٹی میں ادب کے پروفیسر ہیں اور 2018ء میں انہیں "امریکن فلوسوفیکل سوسائٹی” کا رکن بنایا گیا ہے۔ اب تک ان کے چار ناولوں کے اردو تراجم کیے جا چکے ہیں، جن میں سے تین کا ترجمہ محترمہ ہما انور نے کیا ہے۔ گزشتہ سال فروری میں اورحان پاموک نے لاہور لٹریری فیسٹیول میں بھی شرکت کی تھی ۔ یہ ان کا پاکستان کا پہلا دورہ تھا۔
اورحان پاموک کی ادبی خدمات کے اعتراف میں انہیں 2006ء میں ادب کے نوبل انعام سے نوازا گیا تھا۔