نظام الدین مرکز کیس:سپریم کورٹ کا مودی حکومت سے سوال،کیا غیر ملکیوں کے ویزے منسوخ ہوئے؟

نئی دہلی:وزارت داخلہ کے تبلیغی جماعت کی سرگرمیوں میں ملوث ہونے کی وجہ سے 3460 غیر ملکی شہریوں کو بلیک لسٹ کرنے کے فیصلے کے خلاف دائر درخواست کی پیر کو سپریم کورٹ میں سماعت ہوئی۔ سپریم کورٹ نے مرکز سے یہ جاننے کے لیے کہ آیاریاستی حکام کی جانب سے غیر ملکیوں کے ویزے منسوخ کرنے کاکوئی حکم جاری کیاگیاہے؟ سپریم کورٹ نے کہاکہ اگرویزا منسوخ کردیا گیا ہے توآپ ہمیں بتاتے کہ وہ یہاں ہندوستان میں کیوں ہیں۔ اگر ویزامنسوخ نہیں ہوتا ہے تویہ الگ صورتحال ہے۔عدالت نے کیس کی سماعت 2 جولائی تک ملتوی کردی ہے۔ 34 غیر ملکی شہریوں کی جانب سے سپریم کورٹ میں ایک درخواست دائر کی گئی ہے۔ عدالت کو درخواست گزاروں نے بتایاتھاکہ حکومت کی طرف سے ویزوں کی منسوخی / بلیک لسٹنگ کے بارے میں کوئی باضابطہ حکم جاری نہیں یا گیا ہے۔ درخواست گزاروں نے کہاہے کہ صرف پریس ریلیز جاری کی گئی اور ان کے پاسپورٹ ضبط کرلیے گئے۔ جب ہائی کورٹ میں کچھ لوگوں کی درخواست کی سماعت ہوئی توحکومت نے اس طرح کاکوئی حکم پیش نہیں کیاہے۔سپریم کورٹ نے کیس کی سماعت کرتے ہوئے کہاہے کہ ہماری سمجھ کے مطابق ہر شخص کے معاملے میں حکومت کی طرف سے ایک الگ حکم جاری کیا جانا چاہیے ، لیکن ہمارے پاس صرف ایک پریس ریلیز ہے۔ ہم جاننا چاہتے ہیں کہ کیاویزامنسوخی / بلیک لسٹ سے متعلق احکامات جاری ہوئے تھے؟