بعد از خدا بزرگ توئی…! – محسن نقوی

اے شہرِ علم و عالمِ اسرارِ خشک و تر​
تو بادشاہِ دیں ہے، تو سلطانِ بحر و بر​
ادراک و آگہی کی ضمانت ترا کرم۔۔!​
ایقان و اعتقاد کا حاصل تری نظر​
تیرے حروف نطقِ الٰہی کا معجزہ!​
تیری حدیث سچ سے زیادہ ہے معتبر​
قرآں تری کتاب، شریعت ترا لباس​
تیری زرہ نماز ہے، روزہ تری سپر​
یہ کہکشاں ہے تیرے محلے کا راستہ!​
تاروں کی روشنی ہے تری خاکِ رہگذر​
میری نظر میں خلد سے بڑھ کر تری گلی​
رفعت میں مثلِ عرشِ بریں تیرے بام و در​
جبریل تیرے در کے نگہباں کا ہم مزاج​
باقی ملائکہ تیری گلیوں کے کوزہ گر​
محفوظ جس میں ہو تیرے نقشِ قدم کا عکس​
کیوں آسماں کا سر نہ جھکے ایسی خاک پر؟​
کیا شئے ہے برق، تابشِ جَستِ براق ہے​
معراج کیا ہے ، صرف تری سرحدِ سفر​
موجِ صبا کو ہے تری خوشبو کی جستجو​
جیسے کسی کے در کی بھکارن ہو دربدر​
قامت ترا ہے روزِ قیامت کا آسرا​
خورشیدِ حشر، ایک نگیں تیرے تاج پر​
ہر رات تیرے گیسوئے عنبر فشاں کی یاد​
تیرے لبوں کی آئینہ بردار ہے سحر!​
آیات تیرے حسنِ خد و خال کی مثال​
واللیل تیری زلف ہے رخسار والقمر​
والعصر زاویہ ہے تیری چشمِ ناز کا​
والشمس تیری گرمئ انفاس کا شرر​
یٰسین تیرے نام پہ الہام کا غلاف​
طٰہ ترا لقب ہے، شفاعت ترا ہنر​
کہسار پاش پاش ہیں ابرو کی ضرب سے​
وو لخت چاند ہے ترے ناخن کی نوک پر​
دریا ترے کرم کی طلب میں ہیں جاں بہ لب​
صحرا ترے خرام کی خاطر کماں بہ سر!​
تیرا مزاج بخششِ پیہم کی سلسبیل​
تیری عطا خزانۂ رحمت ہے سر بہ سر​
تیرے فقیر اب بھی سلاطینِ کج کلاہ​
تیرے غلام اب بھی زمانے کے چارہ گر​
یہ بھی نہیں کہ میرا مرض لاعلاج ہو!​
یہ بھی نہیں کہ تجھ کو نہیں ہے مری خبر!!​
ہاں پھر سے ایک جنبشِ ابرو کی بھیک دے​
ہاں پھر سے اک نگاہِ کرم میرے حال پر​
سایہ عطا ہو گنبدِ خضریٰ کا ایک بار​
جھلسا نہ دے غموں کی کڑی دھوپ کا سفر​
تیرے سوا کوئی بھی نہیں ہے جہاں پناہ!​
ہو جس کا نام باعثِ تسکیں پئے جگر​
محسن، کہ تیری راہگذر کا فقیر ہے!​
اُس پر کرم دیارِ نبوت کے تاجور​
دے رزقِ نطق مجھ کو بنامِ علی ولی​
یا بہرِ فاطمہ وہ ترا پارۂ جگر​
حسنین کے طفیل عطا کر مجھے بہشت​
میری دعا کے رخ پہ چھڑک شبنمِ اثر​
تیرے سوا دعا کے لیے کس کا نام لوں؟​
"بعد از خدا بزرگ توئی قصہ مختصر”​

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*