نماز میں سورتوں کی قرآنی ترتیب کا لحاظ رکھنا نہ ہی فرض ہے نہ واجب !- ڈاکٹر محمد واسع ظفر

استاذ و سابق صدر، شعبہ تعلیم ، پٹنہ یونیورسٹی، پٹنہ
نماز میں سورتوں کی قرآنی ترتیب کا لحاظ رکھنا بعض علماءفرض یا واجب سمجھتے ہیں۔ اس کا ادراک احقر کو حال میں پیش آئے ایک واقعہ سے ہوا۔ایک مسجد میں مغرب کی نماز حسب معمول ادا کی گئی۔ نماز کے اختتام پر ایک عالم صاحب کھڑے ہوئے اور یہ فتوی صادر فرمایا کہ نماز نہیں ہوئی کیوں کہ سورتوں کی ترتیب کی خلاف ورزی ہوئی ہے۔ امام صاحب جو خود ایک عالم ہیں ، نے بلا کسی ردوکد کے فوراً ہی نماز کے اعادہ کا اعلان کردیا اور ان عالم صاحب کو ہی امامت کے لئے آگے بڑھا دیا۔ چنانچہ نماز دوبارہ ادا کی گئی ۔ مزے کی بات یہ ہے کہ کسی نے بھی امام صاحب سے یہ سمجھنے کی زحمت گوارا نہیں کی کہ آخر کیا غلطی ہوئی جس کی وجہ سے نماز دہرانے کی نوبت آئی اور نہ ہی ان علماءنے اس کی وضاحت کی ضرورت محسوس کی جبکہ مسجد وسیع ہونے کی وجہ سے بہت سے مصلیان ان کے آپسی مکالمے کو سن نہیں سکے تھے اور پورے معاملہ کو سمجھ نہیں پائے ۔ احقر بھی مسجد کے ایک گوشے میں تھا اور علماءکی وضاحت کا منتظر بھی لیکن اس کی نوبت ہی نہیں آئی اور اس سے پہلے کہ میں نوافل واذکار سے فارغ ہوتا لوگوں نے اپنی اپنی راہ لی۔ اس لئے ضرورت محسوس ہوئی کہ استفادہ عام کے لئے اس مسئلہ کی وضاحت کی جائے۔
احادیث و آثار سے یہ بات ثابت نہیں کہ نماز میں سورتوں کی قرآنی ترتیب کا لحاظ رکھنا ضروری ہے بلکہ جو چیز ثابت ہے وہ اس کے بالکل برعکس ہے۔ آپ خود ملاحظہ کرلیں۔ حضرت حذیفہؓ سے روایت ہے کہ انہوں نے فرمایا: ”ایک رات میں نے نبی اکرم ﷺ کے ساتھ نماز ادا کی، آپ نے سورة البقرة کا آغاز کیا، میں نے (دل میں) کہا : آپ سو آیات پڑھ کر رکوع کریں گے مگر آپ آگے بڑھ گئے، میں نے (دل میں) کہا: آپ اسے (پوری) رکعت میں پڑھیں گے (یعنی نصف ایک رکعت میں اور نصف دوسری میں)، آپ آگے پڑھتے گئے، تو میں نے (دل میں) کہا : آپ اس کے اختتام پر رکوع کریں گے مگر آپ نے سورة النسآءشروع کردی، اس کو پورا پڑھا، پھر آپ نے آل عمران شروع کردی، اسے پورا پڑھا، آپ ٹھہر ٹھہر کر قرا¿ت فرماتے تھے، جب آپ ایسی آیت سے گزرتے جس میں تسبیح ہوتی تو آپ سبحان اللہ کہتے اور جب سوال (کرنے والی) آیت سے گزرتے تو سوال کرتے اور جب پناہ مانگنے والی آیت سے گزرتے تو (اللہ سے) پناہ مانگتے، پھر آپ نے رکوع فرمایا اور سبحان ربی العظیم کہتے رہے یہاں تک کہ آپ کا رکوع بھی قیام کے برابر ہوگیا پھر آپ نے سمع اللہ لمن حمدہ کہا، پھر اس کے بعد رکوع کے برابر طویل قیام کیا پھر سجدہ کیا اور سبحان ربی الاعلیٰ پڑھا اور آپ کا سجدہ بھی آپ کے قیام کے برابر طویل تھا۔“۔ ( صحیح مسلم، کتاب صلوٰة المسافرین و قصرھا، بابُ استِح±بَابِ تَط±وِیلِ ال±قِرَائَ ةِ فِ¸ صَلَاةِ اللَّی±لِ، رقم الحدیث ۴۱۸۱ ؛ نیزسنن نسائی، کتاب التطبیق، رقم الحدیث۳۳۱۱)۔
اس حدیث سے یہ معلوم ہوا کہ آپ نے نماز کی پہلی رکعت میں پہلے سورة البقرة تلاوت کی پھر سورة النسآءپڑھی پھرآل عمران جب کہ قرآنی ترتیب میں سورة آل عمران پہلے ہے اور سورة النسآءبعد میں۔اس سے یہ نتیجہ اخذ کرنا دشوار نہیں کہ سورتوں کی قرآنی ترتیب کا لحاظ رکھنا قرا¿ت میں لازم نہیں ورنہ رسول اللہ ﷺ اس کا ضرور ہی خیال رکھتے۔ اس حدیث سے بعض لوگ یہ اخذ کرسکتے ہیں کہ یہ تو رسول پاک ﷺ کے نوافل کا عمل ہے چنانچہ نوافل میں یہ درست ہوسکتا ہے لیکن فرائض میں نہیں! تو آئیے فرائض کی مثال بھی ملاحظہ کرتے ہیں۔
انس بن مالکؓ سے روایت ہے کہ انصار میں سے ایک صاحب (کلثوم بن ہدمؓ) قباءکی مسجد میں لوگوں کی امامت کیا کرتے تھے۔ وہ جب بھی کوئی سورة جو (سورة الفاتحہ کے بعد) نماز میں پڑھی جاتی ہے شروع کرنے کا ارادہ کرتے تو اس کا آغاز قل ھو اللہ احد سے کرتے ، جب اس سے فارغ ہوجاتے پھر کوئی دوسری سورة اس کے ساتھ پڑھتے تھے۔ وہ ہر رکعت میں ایسا ہی کیا کرتے تھے۔ ان کے ساتھیوں نے ان سے بات کی اور (اعتراضًا) کہا کہ تم اس سورة (اخلاص) سے ابتدا کرتے ہو پھرہم نہیں دیکھتے کہ وہ تمہارے لئے کافی ہوتی ہے یہاں تک کہ تم دوسری سورة بھی (اس کے ساتھ ضرور) پڑھتے ہو، یا تو تم صرف اسی سورة کو پڑھو یا اسے چھوڑ دو اور صرف دوسری سورة پڑھا کرو۔ انہوں نے کہا کہ میں تو اسے نہیں چھوڑسکتا، اگر تمیں پسند ہوتو میںاسی طرح تمہاری امامت کروں گا اور اگر تم اسے ناپسند کرتے ہو تو میں تمہیں (نماز پڑھانا) چھوڑ دوں گا۔ وہ لوگ انہیںاپنے درمیان سب سے افضل خیال کرتے تھے اس لئے انہوں نے ان کو چھوڑ کر کسی دوسرے کی امامت کوپسند نہیں کیا۔ جب نبی کریم ﷺ تشریف لائے تو لوگوں نے آپ کو اس واقعہ کی خبر دی۔ آپ نے ان سے پوچھا کہ اے فلاں! اپنے ساتھیوں کی بات ماننے سے تمہیں کس چیز نے روکا اور ہر رکعت میں اس سورة کو لازم قرار دے لینے کی وجہ کیا ہے؟ انہوں نے کہا: یا رسول اللہ ! میں اس سورة سے محبت رکھتا ہوں۔ تو آپ نے فرمایا: اس سورة کی محبت تمہیں جنت میںداخل کردے گی ۔ (صحیح بخاری، کتاب الاذان، بابُ ال±جَم±عِ بَی±نَ السُّورَتَی±نِ فِ¸ الرَّک±عَةِ)۔
اس حدیث سے بھی یہ معلوم ہوا کہ سورتوں کی قرآنی ترتیب کا لحاظ رکھنا قرا¿ت میں لازم نہیں کیوں کہ انصاری صحابیؓ جب بھی نمازپڑھاتے تھے تو ہر رکعت میں سورة الفاتحہ کے بعدپہلے سورة اخلاص پڑھتے پھر کوئی اور سورة پڑھتے جس میں ترتیب کی خلاف ورزی لازمی طور پر ہوتی تھی لیکن نبی کریم ﷺ کو جب یہ بات بتائی گئی تو آپ نے انہیں اس سے منع نہیں کیا بلکہ سورة اخلاص کی محبت کی وجہ سے انہیں جنت کی بشارت بھی دے دی۔ گویا آپ نے ان کے اس عمل کو برقراررکھنے پر مہر لگادی۔
ؓ صحیح بخاری کے اسی باب میںجس میں مذکورہ بالا حدیث ہے عبداللہ بن سائبؓ کی روایت ہے کہ احنف بن قیسؓ نے (فجر کی) پہلی رکعت میں سورة الکہف پڑھی اور دوسری میں سورة یوسف یا یونس پڑھی اور یہ ذکر کیا کہ میں نے حضرت عمرؓ کی اقتدا میں نماز پڑھی ہے انہوںنے انہی دو سورتوں کو صبح کی نماز میں پڑھا تھا ۔(صحیح بخاری، کتاب الاذان، بابُ ال±جَم±عِ بَی±نَ السُّورَتَی±نِ فِ¸ الرَّک±عَةِ)۔ یہ تو ہر شخص کے علم میں ہے قرآن شریف میں سورة الکہف اٹھارہویں نمبر پر ہے جب کہ سورة یونس دسویں اور سورة یوسف بارہویں نمبر پر ہے، اگر قرا¿ت میں ترتیب لازم ہوتی تو یہ اجلہ صحابہ کرام رضی اللہ عنہم اس کے برعکس نہیں کرتے۔
مذکورہ بالا احادیث اور آثار صحیحہ سے یہ بالکل واضح ہے کہ نماز میں سورتوں کی قرآنی ترتیب کا لحاظ رکھنا لازمی نہیں ہے اور خلاف ترتیب پڑھنا بلا کراہت جائز ہے۔ اس سے نماز میں کوئی خلل واقع نہیں ہوتا، یہی امام بخاریؒ کا موقف ہے۔ جن فقہاءنے ترتیب کا لحاظ رکھنے کی وکالت کی ہے ان کے نزدیک بھی یہ مستحب ہے اور اس کے خلاف کرنا مکروہ ہے ۔ علامہ وھبة الزحیلیؒ اپنی مشہور تصنیف الفقہ الاسلامی و ادلتہ میں رقمطراز ہیں: ”و یندب باتفاق الفقھاءا¿ن یکون ترتیب السور ف¸ رکعتین علی نظم المصحف، فتنکیس السور مکروہ“ یعنی فقہاءکا اس پر اتفاق ہے کہ رکعتوں میں سورتوں کی ترتیب مصحف (قرآن) کی ترتیب کے مطابق رکھنا مستحب ہے، سورتوں کو الٹ کر پڑھنا مکروہ ہے۔ (الفقہ الاسلامی وادلتہ، دارالفکر، دمشق، ۵۸۹۱ئ، جلد اول، صفحہ ۹۹۶)۔
شیخ مفتی محمد تقی عثمانی دامت برکاتہم نے بخاریؒ کی مذکورہ روایتوں کی تشریح میں یہ فرمایا ہے : ”حنفیہ، مالکیہ اور شافعیہ رحمہم اللہ اس کو (یعنی تریب کی خلاف ورزی کو) خلاف اولیٰ اور مکروہ تنزیہی قرار دیتے ہیں۔ امام احمدؒ کی بھی ایک روایت یہی ہے۔ امام احمدؒ اور امام مالکؒ کی ایک ایک روایت امام بخاری رحمہم اللہ (کی روایت) کے مطابق بھی ہے۔“ ۔ وہ آگے فرماتے ہیں : ”حنفیہ کا کہنا یہ ہے کہ مصحف عثمانی کی ترتیب پر اجماع ہے اور یہ ترتیب اگرچہ اجتہادی ہے مگر صحابہ کرام رضی اللہ عنہم نے اس کو آنحضرت کے عمل پر ہی مبنی فرمایا ہے، لہٰذا اس کا اعتبار مستحب ہے، اور اس کے خلاف کرنا خلاف اولیٰ ہے۔“(انعام الباری دروس صحیح بخاری شریف ، افادات شیخ الاسلام مفتی محمد تقی عثمانی صاحب ، ضبط و ترتیب محمد انور حسین، مکتبة الحرائ، کراچی، ۰۱۰۲ئ، جلد ۳، صفحہ ۴۳۵)۔
مفتی اعظم محمد کفایت اللہ دہلوی نوراللہ مرقدہ سے سوال کیا گیا کہ ایک شخص نے مغرب کے وقت اول رکعت میں سورہ فلق اور دوسری رکعت میں سورہ اخلاص پڑھی تو نماز صحیح ہوئی یا نہیں؟ انہوں نے جواب دیا: ”قرآن مجید کی ترتیب بدل کر الٹا کرنا مکروہ ہے، یہ کراہت قصداً پڑھنے کی صورت میں ہے، نماز تو ہوجائے گی مگر مکروہ ہوگی اور بلاقصد پڑھ لی جائے تو کراہت بھی نہیں اور نماز بلاکراہت درست اور صحیح ہے۔“ (کفایت المفتی، دار الاشاعت، کراچی، ۱۰۰۲ئ، جلد ۳، صفحہ ۲۵۴-۳۵۴)۔
بعض احناف اس مسئلہ میں یہ موقف رکھتے ہیں کہ سورتوں کی ترتیب کا لحاظ رکھنا واجبات تلاوت میں سے ہے، واجبات نماز سے نہیں۔مفتی سیدعبد الرحیم صاحب لاجپوریؒ سے سوال کیا گیا کہ امام نے پہلی رکعت میںسورہ¿ کافرون پڑھی اور دوسری رکعت میں سورہ¿ کوثر یا سورہ¿ صیف پڑھی تو اس طرح قرآن کی ترتیب کے خلاف پڑھنے سے نماز درست ہوگی یا نہیں؟ انہوں نے جواب دیا: ”ترتیب سور واجبات تلاوت میں سے ہے، واجبات نماز سے نہیں، لہٰذا اس طرح پڑھنے سے سجدہ سہو نہیں، ہا ں عمداً اس طرح پڑھنا مکروہ ہے، نسیاناً پڑھے تو مکروہ بھی نہیں ، بحوالہ (درمختار) شامی، جلد ۱، صفحہ ۰۱۵۔“ (فتاویٰ رحیمیہ، دار الاشاعت، کراچی، ۹۰۰۲ئ، جلد ۵، صفحہ ۵۸)۔
دارالافتاءجامعة العلوم الاسلامیہ، علامہ محمد یوسف بنوری ٹاو¿ن کراچی نے بھی اس مسئلہ میں یہی موقف اختیارکیا ہے۔ ایک فتوے کا یہ اقتباس ملاحظہ کریں: ”نماز میں قرا¿ت کے دوران سورتوں کی ترتیب کی رعایت رکھنا قرا¿ت کے واجبات میں سے ، نماز کے واجبات میں سے نہیں ہے، فرض نمازوں میں قصداً قرآن مجید کی ترتیب کے خلاف قرا¿ت کرنا مکروہ تحریمی ہے، یعنی جو سورت بعد میں ہے اس کو پہلی رکعت میں پڑھنا اور جو سورت پہلے ہے اس کو دوسری رکعت میں پڑھنا مکروہ تحریمی ہے، مثلاً پہلی رکعت میں سورہ¿ کافرون اور دوسری رکعت میں سورہ¿ کوثر پڑھی گئی تو قصداً پڑھنے کی صورت میں کراہت کے ساتھ نماز ادا ہوجائے گی اور اگر سہواً یا غلطی سے ترتیب کے خلاف پڑھا تو نماز بلا کراہت درست ہوجائے گی لیکن دونوں صورتوں میں سے کسی میں بھی سجدہ سہو واجب نہیں ہوگا اور اس نماز کو دوبارہ پڑھنا لازم نہیں ہوگا؛ کیوں کہ ترتیب واجبات قرا¿ت میں سے ہے نہ کہ واجبات نماز میں سے، نفل نماز میں قصداً قرآن مجید کی ترتیب کے خلاف قرا¿ت کرنا مکروہ نہیں ہے، تاہم ترتیب سے پڑھنا بہتر ہے۔“۔اس تحریر کے بعد اس فتوے کی تائید میں الدرالمختار و حاشیہ ابن عابدین (ردالمختار) سے اقتباسات نقل کئے گئے ہیں۔ (فتوی نمبر: ۳۵۲۰۰۲۱۰۰۴۴۱، دارالافتائ، جامعة العلوم الاسلامیہ، علامہ محمد یوسف بنوری ٹاو¿ن)۔
مذکورہ فتاوی کی روشنی میں بھی دیکھیں تویہ بات بالکل واضح ہے کہ نماز میں سورتوں کی قرآنی ترتیب کا لحاط رکھنا کسی کے نزدیک بھی نماز کے فرائض یا واجبات میں سے نہیں ہے۔ جو بھی اختلاف ہے وہ کراہت اور عدم کراہت کاہے۔ اس لئے کسی نے بھی ترتیب کی خلاف ورزی پر سجدہ سہو یا نماز کے اعادہ کا حکم نہیں لگایا۔ خلاصہ کلام یہ کہ سورتوں کی ترتیب کا نماز میں خیال رکھا جاسکتا ہے جیسا کہ بعض علماءکا موقف ہے لیکن اس کی خلاف ورزی پر سجدہ سہو یا نماز کے اعادہ کی بالکل ضرورت نہیں۔اللہ پاک ہمیں دین کی صحیح سمجھ نصیب فرمائے۔ آمین!

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*