نعت رسول

ڈاکٹر سید افضل حسین قاسمی
نورنگ دواخانہ بنگلور

ہم  نے  دیکھ  کر  طیبہ ،  قسم  ایسی  کھالی  ہے
کہ  یہ  شاعری  اپنی ،  اب  گُنہ  سے  خالی  ہے

د ر  ر سو لِ  ا کر م   کا ،  مر جعِ  خلا ئق   ہے
جاکے  اس  جگہ  دیکھو ،  ہر  کوئی  سوالی  ہے

وہ  نظر  سعا د ت  کی ،  بھو ل  ہی  نہیں  پا  تے
جب  سے اک  نظر  ہم  نے، جالیوں  پہ  ڈالی  ہے

ان پہ  جان  کے  صدقے ،  مال  بھی  نچھاور  ہے
جن  کا   ہر  عمل   مِشعل ،  ہر ا د ا  نر ا لی   ہے

سر خرو  و ہی  ہو گا ،  جس  نے  بند گی  کر تے
ا ن  کی  را ہ  پر  چل  کر ،  ز ند گی  بنا  لی  ہے

و ا عظو   نہ  سمجھا ؤ  ،  طو رِ  بند گی   ہم   کو
حکمِ  بند گی  اُن  کا  ،  اِن  سے  گردِ  پا  لی   ہے

ہیں   غلا م   د نیا   میں  ،  آ پ   کے  بہت   لیکن
پا  سکا ہے  کو ئی    جو،   رُ تبہ ء   بلا  لی   ہے

آپ  ہیں  ر سو لو ں   میں، عظمتو ں  کا   مینا ر ہ
ہا  شمی  لقب  اُ مّی ، اور  نسب  بھی  عا لی    ہے

قا سمی  ند ا مت  کے ،  عر قِ   چشم   ہیں  ریزاں
ہے نہ  کچھ  عمل  اپنا ، سر  کُلَہ  سے  خا لی   ہے

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*