مسلم آبادی بڑھنے کی افواہ پھیلاکر اکثریت میں خوف پیدا کرنے کی کوشش کی جارہی ہے:ایس وائی قریشی

غالب انسٹی ٹیوٹ کے زیراہتمام فخرالدین علی احمد یادگاری خطبہ

نئی دہلی(پریس ریلیز):غالب انسٹی ٹیوٹ کے زیر اہتمام فخرالدین علی احمد یادگاری خطبہ بعنوان ’’کیامسلمان ہندوآبادی پر غلبہ حاصل کر رہے ہیں‘‘ کا انعقاد کیاگیا۔ خطبہ پیش کرتے ہوئے سابق چیف الکشن کمشنر ڈاکٹرایس۔وائی۔ قریشی نے کہاکہ عوام کے درمیان یہ افواہ پھیلانے کی کوشش کی جارہی ہے کہ مسلمان اتنی تیزی سے اپنی آبادی بڑھاہے ہیں کہ عنقریب وہ اس ملک کی اکثریت پر غالب آجائیں گے اور یہاں اپنا نظام نافذ کردیں گے۔ حالانکہ اگر ہم حکومت ہند کی جانب سے ہونے والے سروے پر نظر کریں تو معلوم ہوگاکہ مسلمانوں نے پہلے کے مقابلے فیملی پلاننگ کو تیزی سے اپنایاہے۔ ملک کے وزیراعظم نے پندرہ اگست کے خطاب میں کہاکہ جو لوگ فیملی پلاننگ کو اپنارہے ہیں ان میں جذبۂ حب الوطنی زیادہ ہے۔ اس میں شک نہیں کہ مسلمان ہندو حضرات کی بہ نسبت فیملی پلاننگ کو کم اپنارہے ہیں لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ ہندو حضرات سکھوں کی بہ نسبت فیملی پلاننگ کم اپنا رہے ہیں۔ دراصل یہ ایک سیاسی بیانیہ ہے جس کو عام کرکے اکثریت میں خوف کا ماحول پیدا کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔ خطبہ کی صدارت جناب نویدمسعود صاحب نے فرمائی۔ اپنے صدارتی خطاب میں انہوں نے کہا کہ مجھے اندازہ نہیں تھاکہ اتنے بڑے اور الجھے ہوئے مسئلے کو قریشی صاحب اتنی آسانی سے حل کردیں گے۔ یہ خطبہ ہر شخص کو ضرور سننا چاہیے اس کے ذریعے بہت سے توہمات دور ہوجائیں گے۔ میرا خیال ہے کہ یہ مسئلہ فرقہ واریت سے نہیں بلکہ سیاست سے متعلق ہے اور وہیں سے اپنی غذا کشید کرتاہے۔ڈاکٹر ایس۔وائی۔ قریشی صاحب نے اسی موضوع پرایک کتاب بھی لکھی ہے جس کا علمی حلقوں میں خاصہ چرچاہے۔ میری خواہش ہے کہ اس کتاب کا ترجمہ بھی ضرور شائع ہو۔لیکن ساتھ ہی اس قسم کے خطبات کی بھی ضرورت ہے تاکہ عام لوگ جو کتاب نہیں پڑھتے حقیقت سے واقف رہیں۔ غالب انسٹی ٹیوٹ کے ڈائرکٹر ڈاکٹر ادریس احمد نے کہا فخرالدین علی احمد یادگاری خطبہ علمی حلقوں میں اپنی خصوصی شناخت رکھتاہے۔اس سلسلے کا پہلا خطبہ ۱۹۸۳میں پروفیسر خواجہ احمد فاروقی نے پیش کیاتھااس وقت سے آج تک کسی نہ کسی نامور شخصیت کو اس خطبے کے لیے منتخب کیا جاتا ہے۔ جناب ایس۔وائی۔ قریشی صاحب کسی تعارف کے محتاج نہیں ہیں لیکن انہوں نے اپنے فرائض منصبی کے ساتھ سیاسی سماجی مسائل سے علمی رابطہ ہموار رکھایہ بڑی اہم بات ہے۔ میں اپنی اور ادارے کی جانب سے تمام شرکاکا شکرگزارہوں کہ آپ نے اس اہم ترین خطبے میںشرکت فرمائی اور اس کو کامیاب بنایا۔۔ اس خطبے کو غالب انسٹی ٹویٹ کے سوشل نیٹ ورکنگ پیجزپر دیکھاجاسکتا ہے۔