ممتاز عالم دین مولانا محفوظ الرحمن شاہین جمالی کا انتقال

میرٹھ: ممتاز عالم دین، خطیب، مصنف و محدث مولانا محفوظ الرحمن شاہین جمالی کا آج 1:45بجے میرٹھ کے ایک اسپتال میں انتقال ہوگیا ـ
مولانا کی طبیعت کئی دنوں سے علیل چل رہی تھی، سانس لینے میں دشواری تھی جس کی وجہ سے ان کو میرٹھ کے آنند ہاسپٹل میں ایڈمٹ کرایا گیا تھا،اس دوران طبیعت بگڑتی اور سنبھلتی رہی، دو مرتبہ وینٹیلٹر پر چلے گئے تھے لیکن کل طبیعت کچھ بحال ہوئی تھی تو آئی سی یو میں منتقل کردیا گیا تھا لیکن آج اچانک انتقال کی خبر آگئی ـ واضح رہے کہ مولانا مرحوم مدرسہ امداد الاسلام صدر بازار میرٹھ کے مہتمم تھے اور مولانا کا شمار ہندوستان کے چوٹی کے علما میں ہوتا تھاـ مولانا کا تعلق بہار کے ضلع مشرقی چمپارن سے تھا ـ وہ ایک بہترین استاذ، منتظم، خطیب اور محدث تھےـ دارالعلوم دیوبند کے جید فاضل ہونے کے ساتھ انھوں نے ہندو مذہبی کتابوں کا بھی مطالعہ کیا تھا اور اپنی تقریروں میں ویدوں کی عبارتوں اور مشمولات کا بکثرت حوالہ دیتے تھےـ انھوں نے طویل عرصے تک علم حدیث کی خدمت کی اور میرٹھ کو اپنی علمی سرگرمیوں کا مرکز بنایا، وہاں سے ان کی شہرت پورے ہندوستان بلکہ تمام علمی دنیا میں ہوئی اور ان کا شمار ملک کے ثقہ علما میں ہونے لگاـ قلم و قرطاس سے بھی ان کا گہرا رشتہ تھا اور انھوں نے متعدد علمی و دینی موضوعات پر کئی کتابیں لکھیں، ایک زمانے میں دیوبند سے شائع ہونے والے اخبار "دیوبند ٹائمز "کے مدیر بھی رہے ـ