محکمہ تعلیم میں فراڈ،پرینکا گاندھی کی یوگی حکومت پر تنقید

نئی دہلی:ایک ٹویٹ میں کانگریس کے جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی نے یوپی کی یوگی حکومت سے محکمہ تعلیم میں فراڈ پر سوال پوچھا ہے۔ پرینکا نے ٹویٹ میں لکھاکہ اگر محکمہ تعلیم میں بہت سارے فراڈ ہو رہے ہیں تو کیا یہ محکمہ کے وزیر کی معلومات میں نہیں تھا؟ کیا وزیراعلیٰ کے دفتر کو بھی اس کے بارے میں معلوم نہیں تھا؟پرینکا گاندھی نے مزید لکھاکہ حیرت کی بات یہ ہے کہ ٹال رنس کی بات کرنے والے بڑی مچھلیوں کی بدعنوانی کو برداشت کر رہے ہیں۔ یہ ساری تقرری کس کے دور میں ہوئیں اور اب تک یہ کیسے جاری رہیں؟اس سے قبل پرینکا گاندھی نے ٹویٹ میں یوپی حکومت کو نشانہ بنایا تھا اور کہا تھا کہ کستوربا اسکول کی تقرریوں میں گھپلے کے بعد محکمہ تعلیم میں دیگر گھوٹالوں کا راز فاش ہونا شروع ہوگیا ہے۔ یہ تقرریاں 2018 میں ہوئیں۔ یہ دو سال تک جاری رہا۔ کیا حقیقت سامنے آنی چاہئے یا نہیں؟پرینکا گاندھی نے لکھاکہ یوپی حکومت کے نظام تعلیم کے ذریعے بدعنوانی کے معاملات مسلسل سامنے آرہے ہیں۔25 جعلی تقرریوں، اسکولوں کی جعلی تقرریوں کے بعد اب مین پوری کے کستوربہ گاندھی اسکول میں جعلی تقرریوں کا معاملہ سامنے آیا ہے۔