مہاجر مزدوروں کے لیےکیا اقدامات کیے،بتائے مہاراشٹر حکومت:بامبے ہائی کورٹ

ممبئی:مہاراشٹر میں ریلوے اور بس اسٹینڈوں پر مہاجر مزدوروں کی بھیڑ جمع ہونے کے واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے بامبے ہائی کورٹ نے ریاستی حکومت سے اس بارے میں رپورٹ دینے اور یہ بتانے کے لیے کہا ہے کہ اس بارے میں اس نے کیا اقدامات کئے ہیں۔ ریاست میں مہاجرمزدوروں کا مسئلہ کافی گرم رہا ہے اور مسلسل مہاجرمزدروں اپنے گھر لوٹنے کرنے کے لئے ہو رہی مشکلات کی خبریں آتی رہی ہیں۔ہائی کورٹ کے چیف جسٹس دیپانکر دتہ اور جسٹس کے کے تاتیڑ کی بینچ سینٹر آف انڈین ٹریڈ یونیس کی ایک عرضی پر سماعت کر رہی تھی جس میں کورونا کے دوران مہاجر مزدوروں کو درپیش مشکلات پر تشویش ظاہر کی گئی ہے۔درخواست گزار کے مطابق جن مہاجر مزدوروں نے مہاراشٹر سے اپنے آبائی ریاست جانے کے لئے اسپیشل ورکرز ٹرینوں اور بسوں کی سہولت اٹھانے سے متعلق درخواست دی انہیں ان کے ایپلی کیشنز کی صورتحال کے بارے میں کوئی معلومات نہیں ہے۔اس میں کہا گیا کہ ٹرین یا بس پر سوار ہونے سے پہلے انہیں تنگ اور گندے کیمپوں میں رکھا جاتا ہے۔ انہیں خوراک اور دیگر ضروری اشیاء بھی مہیا نہیں کرائی جاتی۔ ایڈیشنل سالیسٹر جنرل انل سنگھ نے عدالت کو بتایا کہ مہاجر مزدوروں سے منسلک مسائل سے متعلق معاملہ سپریم کورٹ میں زیر غور ہے۔ عدالت نے اس پر کہا وہ چاہتی ہے کہ اس بارے میں ریاستی حکومت دو جون تک ایک رپورٹ جمع کروائے۔لاک ڈاؤن کے بعد سے مہاراشٹر سے لاکھوں کی تعداد میں مہاجر مزدوروں اپنے اپنے ریاستوں کے لئے لوٹ چکے ہیں۔حالانکہ اس دوران مختلف مواقع پر مہاجر مزدوروں کے جمع ہونے کی وجہ سے مہاراشٹر حکومت کو تنقید جھیلنی پڑی تھی۔