ماب لنچنگ:کیب ڈرائیو رآفتا ب عالم کو انصاف دلانے کے لیے جمعیۃعلماعدالت کا رخ کرے گی

نئی دہلی:مبینہ طور پر ہیٹ کرائم کے شکار ہوئے کیب ڈرائیو ر آفتاب عالم کے اہل خانہ سے جمعیۃ کے وفد نے لگار دوسرے دن آج ملاقات کی اور ان کی درخواست پر عدالت میں مقدمہ کی پیروی کا فیصلہ کیا ۔اس سلسلے میں آفتاب کے والدین اورلڑکوں نے جمعیۃ علماء ہند کے جنرل سکریٹری مولانا محمود مدنی کے نام ایک تحریری درخواست دی ہے کہ بے قصوروں اور مظلوموں کی امیدگاہ ’جمعیۃ علماء ہند‘ ان کو انصاف دلائے ۔ جمعیۃ علماء ہند کے وفد نے ترلوک پوری دہلی میں ان کے غم زدہ اہل خانہ سے ملاقات کی اور اس پورے واقعہ کی تفصیل حاصل کی، غم زدہ خاندان میں بیمار والدین اور چھوٹے چھوٹے بچے ہیں ، جن کی کفالت کی ذمہ داری آفتا ب عالم پر تھی۔مرحوم آفتا ب کے والد طاہر حسین ، صاحبزادے محمد صابر ،محمد شاہد اور محمد ساجد نے بتایا کہ ان کے والد اپنے کسی جاننے والے کو لے کر گروگرام سے بلند شہر بذریعہ کیب چھوڑنے گئے تھے ، واپسی میں انھوں نے کچھ مسافرو ں کو گاڑی میں بیٹھا لیا تھا ، انھوں نے ہی ان کے والد کو مارا ہے ، ہمارے پاس آڈیو ہے کہ ان لوگوں نے ان کے والد کو جے شری رام بولنے پر مجبور کیا اور شراب پینے کی دعوت دی ، اسے کسی بھی لوٹ مار یا عام قتل کے زمرے میں نہیں رکھا جاسکتاہے۔ یہ سراسر مذہب کی بنیادپرنفرت کی وجہ سے ہوا ہے ، صابر نے کہا کہ ان کے والد ہیٹ کرائم کے شکار ہو ئے ہیں،ہماراصر ف ایک مقصد ہے کہ انصا ف ملے ۔اس سلسلے میں جمعیۃ علماء ہند کے وفد نے بادل پور تھانہ یوپی میں جا کرپولس افسران سے ملاقات کی اور انصاف کے تقاضے یا د دلائے ۔ جمعیۃ کے وفد نے کہا کہ پولس اسے لوٹ مار یا مجرمانہ اعمال سے جوڑکر خود سے فیصلہ کا رخ ہرگز نہ بدلے بلکہ ہیٹ کرائم اور مذہبی شدت پسندی کے معاملے کو اپنی تحقیق کے دائر ے میں لائے۔جب آڈیومیں ایک بات صاف سنائی دے رہی ہے تو پولس خود سے ہی معاملے کو خاص رخ پر کیسے پیش کر سکتی ہے ۔بہر حال جمعیۃ علماء ہند نے مرحوم آفتاب عالم اور ان کے اہل خانہ کو انصاف دلانے کا فیصلہ کیا ہے ۔ وفد میں شریک جمعیۃ علماء ہند کے وکیل ایڈوکیٹ شمیم اختر نے پورے ریکارڈس جمع کیے ہیں اور ایک نتیجہ پر پہنچ مقدمہ کی پیروی کریں گے ۔ جمعیۃعلماء ہند کے وفد میں مولانا حکیم الدین قاسمی سکریٹری جمعیۃ علماء ہند، مولانا دائود امینی نائب صدر جمعیۃ علماء صوبہ دہلی ، مولانا قاری مصطفی دادری ، مولانا غیو ر احمد قاسمی ، ایڈوکیٹ شمیم اختر، مولانا سعد جمعیۃ یوتھ کلب وغیرہ شریک تھے ۔