مصر اور ترکی کے درمیان قربت کا خیر مقدم کرتے ہیں:اسماعیل ھنیہ

استنبول:حماس کے سیاسی شعبے کے سربراہ اسماعیل ھنیہ نے ترکی اور مصر کے درمیان کشیدگی میں کمی اور دونوں ممالک میں بڑھتی قربت کا خیر مقدم کیا ہے۔اطلاعات کے مطابق اسماعیل ھنیہ نے ایک بیان میں کہا کہ ترکی اور مصر کی قربت فلسطینی قوم اور قضیہ فلسطین کے مفاد میں ہے۔ انہوں نے کہا کہ حماس نے القدس ہماری منزل کا انتخابی نعرہ اختیار کیا ہے اور اہم انتخابات کے ذریعے اہم پیغامات دے رہے ہیں۔ حماس فلسطین میں انتخابات کے بعد مخلوط قومی حکومت کے قیام کے فیصلے کی پابند ہے۔اسماعیل ھنیہ نے اپنے دورہ ترکی کے دوران استنبول میں ترک نیوز ایجنسی اناطولیہ کے صدردفتر کا دورہ کیا اور ایجنسی کے ڈائریکٹر جنرل متین موطان اوگلو سے ملاقات کی۔اس موقعے پر بات کرتے ہوئے اسماعیل ھنیہ کا کہنا تھا کہ ترکی اور مصر کی قربت ہمارے لیے خوش آئند ہے۔ مصر اور ترکی دو بڑے مسلمان ملک ہیں اور ان کی کشیدگی کسی بھی صورت میں فلسطینیوں کے مفاد میں نہیں۔ان کا کہنا تھا کہ حماس پوری اسلامی دنیا اور عرب ممالک میں اتحاد و اتفاق کی حامی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ترکی اور مصر مل کر خطے کی اقوام کے مسائل اور مسئلہ فلسطین کے دیر پاحل کے لیے کلیدی کردار ادا کرسکتے ہیں۔ایک سوال کے جواب میں حماس کے سربراہ کا کہنا تھا کہ عرب اور مسلمان ممالک میں رسا کشی کے مسلم امہ کے وسائل پر منفی اثرات کا موجب بن سکتی ہے اور اقوام کے مستقبل کے لیے تباہ کن ہے۔ عالم اسلام اور عرب ممالک کی توجہ صہیونی ریاست کے توسیع پسندانہ نظام اور منصوبہ کی روک تھام کے لیے ہونی چاہیے۔