میڈیاکادعویٰ،نہ مندرمیں نمازپڑھی گئی،نہ مسجدمیں ہنومان چالیسا

پجاری نے کہا،نمازکے پوزکی ہندودوستوں نے صرف تصویرلی،متولی نے کہا،ہنومان چالیساکی اجازت نہ ملنے پربصداحترام واپس چلے گئے
متھرا:29 اکتوبر کودو مسلمان نوجوانوں کے مندرمیں نمازپڑھنے پرہنگامہ جاری ہے۔اس کے ردعمل میں مختلف بیان اوراوراقدامات کیے گئے ہیں ۔کئی جگہوں پرمسجدمیں ہنومان چالیساکی خبربھی آئی ہے ۔یہاں تک کہ ان کی گرفتاری بھی ہوگئی ہے۔ لیکن اے بی پی نیوز نے اپنی تفتیش میں پایاہے کہ یہ دونوں واقعات صرف آدھے سچ ہیں۔ نندا باباکے مندرمیں نمازپڑھنے کاپوزلیاگیا، نماز ادانہیں کی گئی۔ اسی طرح مسجدمیں ہنومان چالیسا نہیں پڑھا گیا تھا۔ لیکن دونوں فریقوںکے شرپسندوں نے ماحول خراب کرنے کی کوشش کی ۔اے بی پی نیوزکاایساہی دعویٰ ہے۔اس سے قبل یہ خبر موصول ہوئی تھی کہ متھراکے علاقے نندگاؤں کے مشہور نند بابا مندر میں دو مسلمان نوجوانوں نے نماز پڑھی ہے۔ بی جے پی کے یووا مورچہ کے مقامی سکریٹری اور نند بابا مندر کے ہیڈ پجاری گوپال سوامی نے بتایاہے کہ 29 اکتوبر کوہونے والے اس واقعے میں مندر میں نماز نہیں پڑھی گئی کیونکہ نماز میں کم از کم 10 منٹ لگیں گے جبکہ دونوں مسلمان نوجوان آئے اور مندرکے عقب میں محض ایک منٹ کے لیے ٹھہرے اور وہاں سے چلے گئے۔ مندر کے مرکزی پجاری گوپال گوسوامی کا کہنا ہے کہ مندر میں نماز نہیں پڑھی گئی تھی۔ صرف پوز میں لی گئی تصویر کو وائرل کردیا گیا۔ جہاں اس جگہ پرنماز کی تصویر کشی کی گئی تھی ، مسلمان نوجوان صرف ایک منٹ کے لیے ٹھہرے ہیں اورنمازکاایک پوز لیا اور گیٹ نمبر دو سے ہوکرچل دیے۔ تصویر ان کے دوہندودوستوں نے لی تھی۔اعتراض یہ ہے کہ انھوںنے یہ کام کیوں کیا؟ ایسا لگتا ہے کہ یہ کام علاقے کے ہم آہنگی کو خراب کرنے اور لوگوں کومشتعل کرنے کے لیے کیاگیا ہے۔ اس کی مکمل تحقیقات ہونی چاہئیں۔متھراکے علاقے میں واقع مسجد عیدگاہ کے امام نیک محمداورمتولی حاجی صابو خان نے بتایاہے کہ مسجد میں ہنومان چالیسا نہیں پڑھا گیا ہے۔ اس موقع پر موجود متولی حاجی صابو خان نے بتایاہے کہ چارہندو لڑکے آئے تھے اور انہوں نے مسجد میں ہنومان چالیساپڑھنے کی اجازت طلب کی تھی۔ انہوں نے کہاہے کہ کچھ لوگوں نے نند بابا مندر میں نماز ادا کی تھی ، لہٰذاہم اس مسجد میں ہنومان چالیسا پڑھیں گے۔ لیکن میں نے ان کواجازت نہیں دی ، وہ احترام کے ساتھ مسجد کوہاتھ جوڑ کر ہنومان چالیساپڑھے بغیرچلے گئے۔ انھوں نے ایک لفظ بھی نہیں کہاہے۔ توہمیں کوئی شکایت نہیں ہے۔