مزدوروں کی حالت زار کےلیے اندراگاندھی ذمے دار:بی جے پی ممبر پارلیمنٹ

بلیا:بی جے پی کسان مورچہ کے قومی صدر اور رکن پارلیمنٹ وریندر سنگھ مست نے سابق وزیر اعظم اندرا گاندھی کو مہاجر مزدوروں کی صورتحال کا ذمہ دار ٹھہرایا اور کہا کہ اگر اندرا نے دتوپنت ٹھینگڑی کے فارمولے کو قبول کرلیا ہوتا تو مزدوروں کی ایسی صورتحال نہ ہوتی۔ سنگھ نے مرکز میں نریندر مودی حکومت کی دوسری مدت مدت کی پہلی سالگرہ کے موقع پر جمعرات کو مہاجر مزدوروں کی خراب صورت حال کے لئے سابق وزیر اعظم اندرا گاندھی کی حکومت کو مورد الزام ٹھہرایا۔انہوں نے کہاکہ سن 1971 میں بینکوں اور صنعتوں کو قومی بناتے ہوئے اس وقت کی وزیر اعظم اندرا ہمارے قائد دتوپنت ٹھینگڑی کا فارمولا قبول کرتے اور صنعتوں اور بینکوں کو قومیانے کے بجائے، مزدوروں کی اجرت کو قومی بناتے، مزدوروں کو قومی بناتے اور قوم کو صنعتی کردیاہوتا تو آج تارکین وطن مزدوروں کی نقل مکانی کی صورتحال ملک کے سامنے نہ ہوتی۔
بتادیں کہ ٹھینگڑی راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کے پرچارک اور سودیشی جاگرن منچ کے بانی تھے۔ بلیا سے تعلق رکھنے والے بی جے پی کے ممبر پارلیمنٹ نے مودی حکومت کی کامیابیوں کا ذکر کرتے ہوئے کہا کہ مودی سرکار نے ملکی پارلیمنٹ اور ریاستی مقننہ سے ترمیم شدہ شہریت بل منظور کیا ہے۔ ملک میں پہلی بار مودی حکومت نے ثابت کیاہے کہ کوئی حکومت اپنے منشور کے مطابق کام کر رہی ہے۔انہوں نے کشمیر کو خصوصی ریاست کا درجہ دینے والے آئین کے آرٹیکل 370 کے خاتمے اور ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے لئے راستہ صاف کرنے کو بھی اہم قرار دیا۔

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*