مولانا وحید الدین خان کی کہانی ہاشم القاسمی کی زبانی ـ عبدالمالک بلند شہری

برصغیر کے پریشان حال مسلمانوں کا قومی المیہ یہ ہے کہ انھیں مخلص قائدین اور بے لوث خدام دین بڑی کم تعداد میں میسر آئے ہیں،یوں تو ہزاروں لوگوں نے دعوائے قیادت کیا، سیکڑوں نے اپنے تئیں مفکر ملت اور خادم دین ہونے کا احساس دلایا لیکن درحقیقت وہ دین کے لبادہ میں رہزن تھے جنہوں نے بدعنوانی، مکاری اور عیاری کے ذریعہ اپنا اور اپنے خاندان کا کیرئیر بنایا، ان کا مستقبل سنوارا اور اپنی نسلوں کے لیے بڑے بڑے محلات اور کوٹھیاں چھوڑ گئےـ ان نام نہاد علما و مبلغین اسلام میں جناب وحید الدین خان کا بھی شمار ہوتاہےـ

مولانا وحید الدین خان ایک اخاذ ذہن اور وسیع مطالعہ کے حامل نادر شخص تھےـ اپنی انتھک محنت اور مسلسل ریاض کے ذریعہ انھوں نے اپنی ایک الگ شناخت بنائی اور علمی و ادبی حلقوں میں مشہورہوئےـ ایک عرصہ تک وہ ندوۃ العلما کے ادارہ مجلس تحقیقات و نشریات سے وابستہ رہےـ اسی زمانہ میں انھوں نے علم جدید کا چیلنج نامی وقیع کتاب لکھی جو ان کی شہرت کا ذریعہ بنی ـ اس کے علاوہ انھوں نے سو سے زیادہ کتابیں لکھیں اور اردو ادب کے ذخیرہ میں گراں قدر اضافہ کیاـ وہ جمعیۃ علما ہند کے اخبار الجمعیہ کے بھی مدیر رہے تھےـ خدا نے ان کو مضبوط قلم سے نوازا تھاـ وہ لکھتے تھے اور بے تکان لکھتے تھےـ غور و فکر اور تدبر و تفکر ان کی طبیعت ثانیہ تھی ـ روز مرہ کے معمولی واقعات سے وہ بڑے اہم نتائج کا استخراج کرلیتے تھےـ ان کا انداز تحریر بڑا دلچسپ تھا،مؤثر اسلوب کے مالک تھے، ان کی نثر بڑی شستہ، شائستہ اور رواں ہوتی تھی،اس میں آبشار کی سی روانی اور گلوں کی سی مہک ہوا کرتی تھی،اسی کے ساتھ ساتھ ان کا مزاج تنقیدی تھا ـ ان کی فطرت میں ادعائیت و انانیت تھی، انھوں نے دین کے مسلمہ اصولوں سے انحراف کیا اور قرآن کریم کی من چاہی تفسیر کی، نزول مسیح کا انکار کیا، نبوی ماڈل کے مقابلہ میں مسیحی ماڈل کی افضلیت بیان کی،جہاد فلسطین کی مخالفت کی اور علی الاعلان یہودیوں کو برحق بتایا، کشمیری مسلمانوں سے برات ظاہر کی، ہندوستان میں رونما ہونے والے تمام خوں ریز فسادات میں یک طرفہ طور پرمسلمانوں کو مجرم و ظالم بتایا، آر ایس ایس کی پالیسیوں کا دفاع کیا اور اسلام دشمن طاقتوں سے راہ ورسم بڑھاکر مادی فوائد حاصل کئے، حتی کہ ان کو پدم وبھوشن ایوارڈ سے بھی نوازا گیاـ

وہ جہاں روشن دماغ تھے، زود نویس قلمکار تھے وہیں ایک بد عنوان، بے ضمیر، یہود نواز، چندہ خور اور دھوکے باز انسان بھی تھے ـ انھوں نے بعض دیگر قائدین و رہنماؤں کی طرح دین و دعوت کے نام پر اپنی تجوری بھری اور اپنی آل و اولاد کو سونے کی اینٹیں فراہم کیں ـ

یہ وہ حیران انکشافات اور الم انگیز باتیں ہیں جو مولانا وحید الدین خان کے دیرینہ رفیق، ان کے سفر و حضر کے خادم، ان کی زندگی کے شب و روز سے آگاہ حیدر آباد کے ممتاز عالم دین حضرت مولانا محمد ہاشم القاسمی کی زبانی بیان کی گئی ہیں جنہیں ان کے صاحبزادہ سجاد فارقلیط نے بڑے ہی دلچسپ اور مزیدار اسلوب میں کتابی شکل میں مرتب کردیا ہےـ

افکار حیات جناب وحید الدین خان کی کہانی مولانا محمد ہاشم القاسمی کی زبانی نامی کتاب جناب وحید الدین خان کی شخصیت کے مخفی گوشوں سے پردہ اٹھاتی ہےـ کتاب کا آغاز حرف چند،وحید الدین خان کے افکار کے عنوان سے ہوتا ہےـ اس میں جناب نثار احمد حصیر القاسمی نے بڑے ہی مؤثر پیرایہ میں وحید الدین خان کے اسباب گمراہی ذکر کئے ہیں اس کے تحت تین بنیادی وجوہات بیان کی ہیں – معیار کا فقدان حد اعتدال سے تجاوز اور حالات کے دباؤ کا اثر ـ اس ضمن میں انھوں نے وحید الدین کے افکار و باطل عقائد بیان کرنے والی کتابوں کے نام بھی لکھے ہیں وحید الدین خان اسلام دشمن شخصیت، وحید الدین خان افکار و نظریات، دعوت و عزیمت پروفیسر محسن عثمانی ـ اس کے بعد عرض مرتب کے عنوان سے سجاد فارقلیط نے اس کتاب کو منظر عام پر لانے کی وجہ بیان کی ہےـ ان کے مطابق وہ ان حقائق کو منظر عام پر نہ لاتے اگر وحید الدین خان اپنی سوانح اوراق حیات میں ہاشم القاسمی پر الزامات نہ لگاتے، انھوں نے رنگ امیزی، کذب بیانی کی اور حقائق کو توڑ مروڑ کر پیش کیا ہے ـ اس کے بعد ابتدائی زندگی کے ذیلی عنوان سے کتاب شروع ہوتی ہے اس کے تحت مولانا ہاشم القاسمی کی شخصیت اور ان کا مختصر تعارف کرایا گیا ہے، جس سے معلوم ہوتا ہے کہ ہاشم صاحب سیمانچل کے ایک بزرگ حاجی جمیل احمد رحمانی کے صاحبزادہ اور دارالعلوم دیوبند کے فارغ التحصیل ہیں اور حیدر آباد میں درس و تدریس کے فرائض انجام دے رہے ہیں، الفیصل مجلہ کے مدیر بھی ہیں اور مرکز اسلامی حیدر آباد کے بانی و صدر ہیں ـ اس کے علاوہ درج ذیل ذیلی عناوین کے تحت حیرت انگیز انکشاف کئے گئے ہیں:
بلاد عرب میں وحید الدین خان ناپسندیدہ شخصیت
وفدکے لیے سعودی ویزا کے حصول میں خان کی ناکامی
انحرافات وحید الدین خان
وحید الدین کی تجارت رخی زندگی
خان کا کذب و فریب
وحید الدین کی جائدادیں
صلح کے لیے سلطان صلاح الدین اویسی کی کوشش
خان کاتعلیمی پس منظر
کے ایم عارف کے ساتھ ڈیل
وحید الدین کی بد اخلاقی
قول و عمل میں تضاد
مدیر الرسالہ کی دوغلی پالیسی

یہ کتاب 237صفحات پر مشتمل ہے – اس کے مرتب سجاد فارقلیط ہیں – اس کا پہلا اڈیشن دسمبر 2020میں منظر عام پر آیا – اس کی قیمت تین سو روپے ہے جو بالکل نامناسب ہے اس کی قیمت دو سو روپے ہونی چاہیےـ ملنے کا پتہ درج ذیل ہے:

مکتبہ الفیصل حمایت نگر حیدر آباد تلنگانہ
فون نمبر:
9553304804
8787244051

میں اپنے رفیق درس برادر گرامی جناب شاداب قمر ندوی کا شکرگزار ہوں کہ ان کے توسط سے مجھے اس قدر معلوماتی کتاب حاصل ہوئی -خدا انھیں جزائے خیر عطا فرمائےـ