مرکزی کابینہ نے وزیر اعظم وائی فائی کومنظوری دی،1 کروڑ ڈیٹامراکزکھلیں گے

نئی دہلی:زرعی قانون پرکسانوں کی طرف سے جاری احتجاج کے درمیان بدھ کے روز مرکزی کابینہ کی میٹنگ ہوئی۔ یہ اجلاس وزیراعظم نریندر مودی کی سربراہی میں ہوا،جس کے بعد مرکزی وزراء پرکاش جاوڈیکر ، روی شنکر پرساد اور سنتوش گنگوار نے کابینہ کے فیصلوں کے بارے میں آگاہ کیا۔ مرکزی وزیر روی شنکر پرساد کے مطابق،حکومت ملک میں 1کروڑ ڈیٹامراکزکھولے گی۔ اس اسکیم کو وزیر اعظم وائی فائی ایکسیس انٹرفیس کا نام دیا گیا ہے ، جس کے ذریعے ملک میں وائی فائی انقلاب برپا کیا جائے گا۔اس کے تحت حکومت پبلک ڈیٹا آفس (PDO) کھولے گی ،اس کے لیے کسی لائسنس کی ضرورت نہیں ہوگی۔ کسی بھی موجودہ دکان کو ڈیٹا آفس میں تبدیل کردیا جائے گا۔ حکومت کو 7 دن میں ڈیٹا آفس ، ڈیٹا ایگریگیٹر ، ایپ سسٹم کے لیے مراکز کھولنے کی اجازت ہوگی۔ مرکزی وزیر روی شنکر پرساد نے کہاہے کہ لکشدیپ کے جزیروں میں بھی فائبر رابطے کو شامل کیا جائے گا۔ رابطہ کوچی سے لکشدیپ کے 11 جزیروں تک 1000 دن میں فراہم کیا جائے گا۔مرکزی وزیر سنتوش گنگوارنے پریس کانفرنس میں بتایا کہ ملک میں خود کفیل بھارت روزگاراسکیم نافذکی جائے گی ، جس کے تحت 2020-2023 تک کل 22 ہزار کروڑ لاگت آئے گی۔ اس اسکیم کے تحت تقریباََ 58.5 لاکھ ملازمین کو فائدہ ہوگا۔ مارچ 2020 سے اگلے سال تک جو لوگ نوکری پرہیں ، ان کی ای پی ایف شراکت حکومت دے گی۔ 1000 سے کم ملازمین والی کمپنیوں کے لیے حکومت 24 فیصد ای پی ایف شراکت دے گی۔