میں روز روز بہانا نہیں بنا سکتی-شازیہ نیازی

بس ایک بار کہا نا، نہیں بنا سکتی
میں روز روز بہانا نہیں بنا سکتی

ترا خیال مری روٹیاں جلاتا ہے
میں اطمنان سے کھانا نہیں بنا سکتی

ضرور وہ کسی آسیب کی گرفت میں ہے
میں اس قدر تو دیوانہ نہیں بنا سکتی

سبھی کے تنگ خیالی نے گھر کو بانٹ دیا
اکیلی سوچ گھرانہ نہیں بنا سکتی

نئے نئے سے یہ انداز چبھ رہے ہیں مگر
میں تم کو پھر سے پرانا نہیں بنا سکتی

 

    Leave Your Comment

    Your email address will not be published.*