مدھیہ پردیش: بہو نے اڈیشہ کے رکن پارلیمنٹ پر جہیز کی وجہ سے ہراسانی کا لگایا الزام ، شکایت درج

 

بھوپال : مدھیہ پردیش پولیس نے اپنی بہو کی شکایت پر اڈیشہ ،کٹک سے تعلق رکھنے والے بیجو جنتا دل کے رکن بھارتھری مہتاب ، ان کی بیوی اور بیٹے کیخلاف جہیز ہراسانی کا مقدمہ درج کیا ہے۔ بھوپال کے ایک عہدیدار نے اس کی اطلاع دی۔ وہیں مہتاب نے بھونیشور میں دعویٰ کیا کہ اس کی بہو 2016 میں شادی کے بعد صرف پانچ چھ دن تک ان کے بیٹے کے ساتھ رہی ہے ،بھوپال میں ایف آئی آر درج کرنا بعد میں رچی گئی کسی نامعلوم سازش کا نتیجہ ہے۔ایک عہدیدار نے بتایا کہ شکایت کنندہ بھوپال کے مہادیو کمپلیکس کی رہائشی ساکشی کی شادی دسمبر 2016 میں دہلی میں اڈیشہ سے بی جے ڈی رکن پارلیمنٹ کے بیٹے لوک رنجن (38) سے ہوئی تھی۔ گزشتہ منگل کو خواتین پولیس اسٹیشن میں درج اپنی شکایت میں ساکشی نے کہا ہے کہ اس کے گھر والوں نے اس کی شادی پر بہت پیسہ خرچ کیا تھا اور اب اسے جہیز کے لیے اس کے سسرال والے ہراساں کر رہے ہیں۔پولیس نے بتایا کہ رکن پارلیمنٹ ان کی بیوی مہاشویتا اور بیٹے لوک رنجن کے خلاف تعزیرات ہند کی مختلف دفعات کے تحت مقدمہ درج کیا گیا ہے۔ دریں اثنا سینئر حکمران بی جے ڈی لیڈر مہتاب نے بھونیشور میں کہا کہ انہیں ابھی تک اس سلسلے میں عدالت یا پولیس کی طرف سے کوئی نوٹس موصول نہیں ہوا ہے۔مجھے نہیں معلوم کہ مجھ پر اور میرے خاندان پر کس قسم کے الزامات لگائے گئے ہیں، اس کی اطلاع مجھے صرف میڈیا کے ذریعہ ملی ہیں۔مہتاب نے بتایا کہ ان کا بیٹا اور بہو شادی کے بعد صرف پانچ چھ دن تک ساتھ رہے تھے، اور 2018 میں مفاہمت کی ناکام کوشش کے بعد علیحدگی کا مقدمہ دائر کیا گیا ہے جو نئی دہلی کی پٹیالہ ہاؤس کورٹ میں زیر التوا ہے۔