لاک ڈاؤن میں معاشی بحران سے دوچار اساتذۂ مدارس کے سلسلے میں علما و دانشوران کی مشاورتی میٹنگ

دہلی حکومت کے وزیر عمران حسین نے ائمہ و علما کے مسائل حل کرنے کے لئے جلد وقف بورڈ کے ساتھ میٹنگ کا وعدہ کیا

نئی دہلی:دینی اداروں کے اساتذہ و مدرسین کرونا وائرس و لاک ڈاؤن کے چلتے سخت حالات کے شکار ہوگئے ہیں ۔ پڑھاتے پڑھاتے ایک عرصہ ہوا اب یہ مشکل ترین پہلو ہے کہ ذریعہ معاش کی کیا شکل ہو مدرسے ادارے تعلیمی سلسلے سب موقوف ہیں تو کیا چہل پہل آمد و رفت اور ذرائع وسائل مہیا ہوسکیں گے۔ انہی مسائل پر غور و فکر کرنے ،کوئی لائحہ عمل طئے کرنے اور مستقل حل ڈھونڈنے کے لئے جواہر لال نہرو نیشنل یوتھ سینٹر دین دیال اپادھیہ مارگ آئی ٹی او نئی دہلی میں” اساتذہ مدارس چیلنج اور حل ” کے عنوان پر ایک مشاورتی مجلس (میٹنگ) زیر صدارت مولانا عبد السبحان قاسمی ناظم اعلیٰ مدرسہ تعلیم القرآن نبی کریم دہلی و صدر جمعیہ علماء ضلع چاندنی دھلی منعقد ہوئی۔ نظامت کے فرائض مشترکہ طور سے مولانا محمد جاوید صدیقی قاسمی و مفتی عبد الواحد قاسمی نے انجام دیے۔ اس موقعے پر دہلی حکومت کے وزیر عمران حسین نے علماء و اساتذہ کی تئیں اس مشاورتی میٹنگ کو اہم قرار دیا اور کہا کہ مجھے ذاتی طور سے یہاں آکر احساس ہوا کہ مدرسوں کے علماء کس قدر حالات میں گھرے ہوئے ہیں۔ انھوں نے مزید کہا کہ چند روز میں دہلی وقف بورڈ کے چئرمین کا انتخاب ہے میں ضروری سمجھتے ہوئے دہلی وقف بورڈ کے چئرمین اور ذمہ داران کے ساتھ ائمہ و علماء اور اساتذہ کے حوالے سے جلد میٹنگ لوں گا۔ کوئی ممکنہ حل یا کوئی لائحہ عمل ان شاءاللہ ضرور طے کیا جائے گا ،تاکہ مدرسین کی پریشانیاں دور کی جاسکیں۔ مولانا عبد السبحان قاسمی نے سبھی شرکا کی توجہات مبذول کراتے ہوئے کہا کہ اہل خیر سرمایہ دار قوم کے فکر مند ذمہ داران کو آگے آنے کی شدید ضرورت ہے
یہ ایک ملی فریضہ ہے، علماء و اساتذہ مدارس کی خبر گیری آپ اور ہم نہیں کریں گے تو کون کرے گا۔ یہ مشاورتی مجلس عوام کو توجہ دلانے کے لئے ہی ہے۔ مولانا عظیم اللہ صدیقی قاسمی نے کہا کہ یہ ادارے یقیناً قومی تشخص و دینی شناخت کا سب سے اہم ذریعہ ہیں، ان کی حفاظت ہم سب پر لازم ہے۔ مفتی عبد الواحد قاسمی صدر ولی الہی دارالافتاء دہلی نے کہاکہ کئی ماہ سے مدرسین کی تنخواہیں بند ہیں، یہ بڑا المیہ ہے۔ اپنے اپنے حلقے میں ان کی ضروریات کا پتہ لگایا جائے اور مدد کی جائے۔ مفتی ڈاکٹر آصف اقبال نے کہاکہ اہلِ مدارس ملک کے معمار ہیں ان کی ترقی ملک کی ترقی ہے، اساتذۂ مدارس کے سلسلے میں قومی سربراہوں کو بھی سوچنے کی اشد ضرورت ہے۔
اس مجلس سے خطاب کرنے والے دیگر حضرات میں مفتی زکریا قاسمی،مولانا عبدالرحمن،مفتی احمد نادر،مفتی علی احمد قاسمی، مولانا غلام رسول، مولانا مقیم، ڈاکٹر اختر، مولانا مرغوب الرحمن قاسمی، طارق رضا چیف ایڈیٹر اخبار دور جدید قابل ذکر ہیں۔ اس مجلس میں علما، ائمہ، دانشوران، مختلف علاقوں کے ذمہ داران و سماجی سرکردہ شخصیات، صحافی، پرنٹ و الکٹرانک میڈیا کے نمائندگان، مدارس و کالج کے اسٹوڈینٹس کی بڑی تعداد شامل رہی۔