کسانوں کی تحریک پر سپریم کورٹ کا اظہار تشویش،چیف جسٹس کا تبلیغی جماعت پر مغالطہ انگیز تبصرہ 

 

نئی دہلی :کسانوں کی تحریک میں کورونا کی صورتحال پر سپریم کورٹ نے تشویش کا اظہار کیا ہے۔ سپریم کورٹ نے مرکز سے پوچھاکہ کسانوں کی تحریک میں کورونا کے بارے میں کیا قوانین پر عمل کیا جارہاہے؟ چیف جسٹس آف انڈیا (سی جے آئی) ایس اے بوبڈے نے کہا کہ ہمیں نہیں معلوم کہ کسان کووڈ سے محفوظ ہیں یا نہیں۔ اگر قوانین پر عمل نہیں کیا گیا تو تبلیغی جماعت کی طرح پریشانی ہوسکتی ہے۔در اصل نظام الدین کے مرکز کیس کورونا لاک ڈاؤن کے دوران ہجوم اکٹھا کرنے کی اجازت کے لئے ایک عوامی مفادات کی عرضی دائر کی گئی تھی ، جس میں درخواست گزار کا کہنا تھا کہ حکومت نے غیر ملکی نمائندوں کونظام الدین مرکز میں بڑی تعداد میں جمع ہونے کی اجازت دے کر لاکھوں شہریوں کی صحت کو خطرے میں ڈالا تھا ۔ چیف جسٹس ایس اے بوبڈے نے مرکز سے پوچھا کہ کیا کسان مظاہرین کوویڈ کے پھیلاؤ کو روکنے کے لئے احتیاطی تدابیر اختیار کررہے ہیں؟ آپ نے مرکز کے واقعہ سے کیا سیکھا؟ کورونا سے تحفظ کو یقینی بنانے کے لئے کیا اقدامات اٹھائے گئے ہیں؟ سپریم کورٹ نے دو ہفتوں میں جواب طلب کیا ہے۔