کسان تحریک کوچھ ماہ مکمل، 26 مئی کو یوم ِسیاہ منانے کااعلان

نئی دہلی :نئے زرعی قوانین کےخلاف احتجاج کررہی 40کسان تنظیم کی مرکزی تنظیم ، متحدہ کسان مورچہ نے ہفتے کے روز اعلان کیا ہے کہ دہلی کی سرحدوں پر جاری احتجاج کے چھ ماہ پورے ہورہے ہیں ، اس چھ ماہ کی تکمیل کے موقعہ پر 26 مئی کو یوم سیاہ منایا جائے گا۔ کسان رہنما بلبیر سنگھ راجے وال نے مرکزی سرکار کے زرعی قوانین کے خلاف 26 مئی کو لوگوں سے گھروں ، گاڑیوں اور دکانوں پر سیاہ پرچم لگانے کی اپیل کی ہے۔ راجے وال نے کہا کہ 26 مئی کو تحریک کے چھ ماہ مکمل ہوں گے اور چھ ماہ پی ایم مودی کی حکومت سازی کے سات سال پورے ہونے کے موقع پر ہو رہا ہے، ہم ایسے موقعہ پر احتجاجاً یوم سیاہ منائیں گے۔مرکز کے زرعی قوانین کے خلاف ’دہلی چلو‘ مارچ کے بینرتلے کسانوں کی ایک بڑی تعداد 26 نومبر کو دہلی کی سرحدوں پر آئی تھی ، جنہیں واٹر کینن اور بیرکیڈنگ کا سامنا کرنا پڑا تھا، پھر بعدازاںآئندہ مہینوں میں دارالحکومت دہلی کے قریب ٹکری ، سنگھو اور غازی پوربارڈر پر ملک بھر سے ہزاروں کسان جمع ہوئے۔راجے وال نے عوام سے اپیل کی کہ وہ 26 مئی کو ’’یوم سیاہ ‘‘منا کر کسانوں کی تحریک میں اپنا تعاون پیش کریں۔ انہوں نے کہا کہ ہم ملک کے عوام سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ اپنے گھروں ، دکانوں ، ٹرکوں اور دیگر گاڑیوں پر سیاہ پرچم لگائیں، ہم بطور احتجاج وزیر اعظم کا پتلا بھی نذرآتش کریں گے ۔راجے وال نے کہا کہ حکومت تینوں زرعی قوانین کو منسوخ کئے جانے کے مطالبے کوتسلیم نہیں کر رہی ہے کھاد ، ڈیزل اور پیٹرول کی بڑھتی قیمتوں کے باعث کاشتکاری مشکل ہورہی ہے۔