کجریوال کی یقین دہانیوں پرمزدوروں کوبھروسہ نہیں،بڑی تعدادمیں نقل مکانی شروع

نئی دہلی:گزشتہ سال بھی کجریوال نے مزدوروں کویقین دہانی کرائی تھی لیکن ہواکیاسب کومعلوم ہے۔اسی لیے کجریوال کے’ میں ہوں نا‘ والی یقین دہانی پروہ بھروسہ کرنے کوتیارنہیں ہیں۔کورونا کے بڑھتے ہوئے معاملات کے پیش نظر دہلی حکومت نے پیر سے ریاست میں لاک ڈاؤن کا اعلان کیا ہے۔ جب سے سی ایم اروند کجریوال نے یہ اعلان کیا ہے دارالحکومت میں مقیم تارکین وطن مزدوروں میں خوف و ہراس پھیل گیا ہے۔ لاک ڈاؤن نافذ ہونے سے قبل لوگوں نے اپنے گھروں کو واپس جانے کے لیے بس اڈوں پر جمع ہونا شروع کردیا۔ جب کسی کو جگہ نہیں ملی تو کوئی بسوں پر لٹکا۔ مزدوروں کا یہ ہجوم پچھلے سال کی یادوں کوواپس لانا شروع کر رہا ہے ، جب دہلی-ممبئی کے مزدور پیدل ہی گھر واپس جانے لگے۔دہلی سے اتر پردیش جانے والے بہت سارے تارکین وطن مزدور آنند وہار ٹرمینل پر کھڑے ہوئے بسوں کا انتظار کرتے نظر آئے تھے۔ شام 5:30 بجے کے بعد فرید آباد۔دہلی کی بدر پور بارڈر پر اچانک لوگوں کا رش شروع ہوگیا۔ تارکین وطن کے بڑھتے ہوئے ہجوم کی وجہ سے  جام ہو گیا۔ لوگ بس میں سوار ہونے کے لیے بے قابوہوگئے۔ جب کسی کو جگہ نہیںملی تو کسی نے بس پر چھلانگ لگائی۔ یوپی کے علاوہ بہار ، مدھیہ پردیش اور راجستھان جانے والے لوگوں کا گروپ بس اسٹینڈ پر جمع ہوگیاہے۔ لاک ڈاؤن نافذ ہونے سے قبل سبھی اپنے گھر پہونچناچاہتے ہیں۔ انہیں پچھلی بار کی طرح لاک ڈاؤن میں پھنس جانے کاخدشہ ہے جب حکومتیں صرف زبانی جمع خرچ سے کام چلارہی تھیں اوراشتہاربازی ہورہی تھی۔