کھڑکی کھلی ہے،مسلمان بندنہ کریں،دلوں کافاصلہ کم کرناہے،نجیب جنگ نے بھاگوت کے بیان کا خیر مقدم کیا

نئی دہلی:نجیب جنگ نے موہن بھاگوت کے بیان پرمسلمانوں کو نصیحت کی ہے لیکن ان سے نہیں پوچھاکہ یہ بیان سنگھ سربراہ کواپنے لوگوں کودیناچاہیے جوآئے دن نفرت کی زبان استعمال کررہے ہیں یہاں تک کہ کل کے بیان کے بعدبھی وہی نفرت انگیزی ہورہی ہے۔سنگھ ان کوکنٹرول کرنے میں ناکام کیوں ہے؟بی جے پی لنچنگ کے ملزموں کااستقبال کیوں کرتی ہے۔دہلی کے سابق لیفٹیننٹ گورنر نجیب جنگ نے راشٹریہ سویم سیوک سنگھ (آر ایس ایس) کے سربراہ موہن بھاگوت کے ڈی این اے سے متعلق بیان کا خیرمقدم کیا ہے۔ نجیب جنگ نے کہاہے کہ بھاگوت جی نے بڑی بات کہی ہے۔ بھاگوت اور وزیر اعظم نریندر مودی کی بات سنی جاتی ہے ، ہندوستان کو متحد ہونے کی ضرورت ہے ، ہمیں متحد ہونے کی ضرورت ہے۔ جنگ نے یہ بھی کہاہے کہ لنچنگ غلط ہے ، یہ غیر قانونی ہے۔ سنگھ کے سربراہ نے رام نریشنا پرمہنس کی بات کی ، گرو نانک کا ذکر کیا۔ دہلی کے سابق لیفٹیننٹ گورنر نے کہاہے کہ بھاگوت جی کی تقریر بہت آسان تھی ، انہوں نے ایک انتہائی سنجیدہ بات کہی ہے۔ لنچنگ کے معاملے پر انہوں نے کہاہے کہ غلط کام کرنے والوں کو سزا دی جائے گی۔ نجیب جنگ نے یہ نہیں بتایاکہ کتنے لوگوں کوسزادی گئی ہے۔نجیب جنگ نے یہ بھی نہیں بتایاکہ لنچنگ کرنے والے مجرموں کابی جے پی کے لوگ استقبال کیوں کررہے تھے۔نجیب جنگ نے موہن بھاگوت سے یہ بھی نہیں کہاکہ یہ بات وہ اپنے لوگوں کوسمجھائیں جوبیان آنے کے اگلے دن ہی زہراگلناشروع کرچکے ہیں۔ملک میں نفرت کاماحول کس نے پیداکیا۔ نجیب جنگ نے کہاکہ دلوں کا فاصلہ کم کرنا ہے۔ اب ایک دروازہ کھل رہا ہے۔ مسلمانوں کو یہ سوچنا چاہیے کہ کھڑکی کھلی ہے ، اسے بند نہ کریں۔ مجھے یقین ہے کہ یہ آگے بڑھے گا۔ ایک اور سوال پر ، ریٹائرڈ انتظامی افسر نجیب جنگ نے کہاہے کہ بھاگوت جی نے اپنے خیالات کو واضح کیا ہے ، انہوں نے بھی وضاحت پیش کی ہے۔ یہ کوئی سیاسی بیان نہیں ہے ، یہ ہندوتوا کا بیان نہیں ہے۔ یہ ہندو کا بیان ہے ، ہمیں اس بیان کی ضرورت ہے۔