جے پی نڈا کوبھی ’عدم رواداری ‘ یادآئی،ممتا بنرجی پرنشانہ

کولکاتہ:جب اپوزیشن کاکوئی سماجی کارکن عدم برداشت یاعدم رواداری کانام لیتاہے توبی جے پی اس پرحملہ آورہوجاتی ہے ۔ لیکن اب یہی عدم رواداری اورعدم برداشت کی اصطلاح بی جے پی صدراستعمال کررہے ہیں۔بی جے پی کے قومی صدر جے پی نڈا مشن بنگال کے ساتھ کولکاتہ پہنچ گئے ہیں۔ بی جے پی صدر جے پی نڈا نے آج مجازی طریقے سے کولکاتہ میں بی جے پی کے انتخابی دفترسمیت 9 دفاتر کا افتتاح کیا۔ اس دوران ریلی سے خطاب کرتے ہوئے جے پی نڈا نے کہا ہے کہ ممتا بنرجی عدم برداشت کا ایک اور نام ہے۔ رابندر ناتھ جی نے جس طرح سے ملک کو ایک نظریہ دیا تھا اسے سب جانتے ہیں ، لیکن بنگال میں آج عدم رواداری بڑھتی جارہی ہے۔بی جے پی صدر جے پی نڈا نے کہاہے کہ دفاتر رسم کا مرکز ہیں ، بی جے پی دفترسے چلتی ہے۔دوسری جماعتیں گھروں سے چلتی ہیں ، یہاں ان کے دفتر ہیں۔ دوسری پارٹیوں کے لیے فیملی پارٹی ہے ، ٹی ایم سی اس سے مختلف نہیں ہے ، یہ بھی خاندان کی پارٹی بن گئی ہے ، لیکن بی جے پی کے لیے پارٹی ہی خاندان ہے۔کولکاتہ میں بی جے پی صدر جے پی نڈا نے کہاہے کہ بنگال میں بی جے پی نے لمبی جنگ لڑی ہے۔ برسوں پہلے بنگال میں ہمارے ووٹوں کی شرح 4 تھی۔ 2014 میں ہماری نشستیں کم ہوکر 2 ہو گئیں اور ہمارے ووٹوں کی شرح 18 ہوگئی۔ 2019 میں ہماری نشستیں 18 تک بڑھیں اورہمارے ووٹوں کی تعداد 40 تک پہنچ گئی۔ 2021 کے انتخابات میں بی جے پی 200 سیٹیں جیت پائے گی۔جے پی نڈابنگال میں اپنے انتخابی مشن کا آغاز وزیراعلیٰ ممتا بنرجی کے گڑھ سے کیاہے ۔