جے پی نڈا بولے:وباکی وجہ سے تاخیرہوئی،سی اے اے جلدنافذہوگا،نتیش کی مشکلیں بڑھیں

سلی گوڑی:بی جے پی کے قومی صدر جے پی نڈانے کہاہے کہ سی اے اے جلد ہی نافذ ہوجائے گا۔ کورونا کی وبا کی وجہ سے اس میں تاخیرہوئی ہے۔جے پی نڈانے یہ بات سلی گوڑی میں کہی۔ انہوں نے کہاہے کہ شہریت ترمیمی قانون سے ہر ایک کوفائدہ ہوگا ، ہم اس پر عمل درآمدکے لیے پرعزم ہیں۔نتیش کمارکے لیے سی اے اے پرووٹنگ گلے کی پھانس بن گئی ہے اورمسلم طبقہ سخت ناراض ہے۔یہاں تک کہ جدیوکے مسلم لیڈران سے اس پرجواب نہیں بن پڑرہاہے۔مختلف حلقوں سے ان سے مسلسل سوال ہورہے ہیں کہ جدیونے سی اے اے پاس کرانے میں مددکیوں کی؟اسی طرح ا ردوکی لازمیت ختم کرنے والانوٹیفکیشن بھی مسلسل پارٹی کے کے مسلم لیڈروں کے لیے دردسربناہواہے اوراس موضوع پرکوئی جواب نہیں ہے ۔دیکھنایہ ہے کہ نڈاکے ا س بیان پروہ کیاوضاحت پیش کرتے ہیں اورکیااعلان کرتے ہیں اورمینی فیسٹومیں شامل کرتے ہیںکہ ان کی حکومت آئی توسی اے اے ،این آرسی لاگونہیں کرے گی۔اسی طرح کسان قانون پربھی وہ خاموش ہیں اوربتانے کی پوزیشن میں نہیں ہیں کہ ان کی حکومت آنے پراسے لاگوکریں گے یانہیں ؟مغربی بنگال میں ممتابنرجی کی حکومت کی تنقیدکرتے ہوئے انہوں نے کہاہے کہ وہ بنگال میں تقسیم اور حکمرانی کی سیاست میں شامل ہیں جبکہ بی جے پی سب کی ترقی کے لیے کام کرتی ہے۔انھوں نے یہ نہیں بتایاکہ پھرسوسے زائدسیٹوں میں بہارمیں انھوں نے ایک بھی مسلم امیدوارکیوں نہیں دیا؟انھوں نے کہاہے کہ بی جے پی اور مودی جی کی بنیادی پالیسی ہے – سب کاساتھ – سب کاوکاس۔دوسری جماعتوں کی پالیسی یہ ہے کہ وہ معاشرے میں تفریق پیدا کریں ، تقسیم کریں ، اسے الگ رکھیں اور حکمرانی کریں۔اس کے ساتھ ، انہوں نے کہا کہ افسوس کی بات ہے کہ ممتا جی کی حکومت نے بنگال میں کسان قانون کو نافذ کرنے کی اجازت نہیں دی ہے۔ بنگال کے 76 لاکھ کسان اس سے محروم ہوگئے ہیں۔جے پی نڈانے کہاہے کہ آپ نے دیکھا ہوگا کہ ممتاجی نے اتنے عرصے تک ہندو معاشرے کو کتنانقصان پہنچایا۔یہ وہ لوگ ہیں جو صرف ووٹ بینک کی سیاست کرتے ہیں ، صرف اقتدار میں رہنے کے لیے سیاست کرتے ہیں۔