آئی ٹی وزیر روی شنکر پرساد نے مارک زکربرگ کو خط لکھا

نئی دہلی:آئی ٹی وزیرروی شنکر پرساد نے فیس بک کے سی ای او مارک زکربرگ کو ایک خط لکھا ہے۔ انہوں نے یہ خط فیس بک کے بارے میں موجودہ تنازعہ پرلکھا ہے۔روی شنکر پرساد نے کہا ہے کہ 2019 کے انتخابات سے قبل ، فیس بک انڈیا مینجمنٹ نے دائیں بازو کے نظریہ کے حامیوں کے صفحات کو حذف کردیاتھا یا ان کی پہنچ کو کم کردیا تھا۔ فیس بک متوازن اور منصفانہ ہوناچاہیے۔ روی شنکر پرساد نے کہا ہے کہ ایسی اطلاعات ہیں کہ فیس بک انڈیا ٹیم میں بہت سارے سینئر افسران ایک خاص سیاسی نظریہ کے حامی ہیں۔ فیس بک کے ملازمین نے وزیر اعظم مودی اور سینئر مرکزی وزراء کے خلاف گالی گلوچ کیا۔ آپ کی تنظیم میں ایک طاقتور جدوجہد جاری ہے۔اہم بات یہ ہے کہ کانگریس نے بی جے پی اور فیس بک کے مابین گٹھ جوڑ کا الزام عائد کیا ہے۔ کانگریس نے ایک بار پھر بی جے پی اور فیس بک کے مابین گٹھ جوڑ کا الزام عائد کرتے ہوئے ایک امریکی اخبارکی تازہ ترین رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ غیر ملکی سوشل نیٹ ورکنگ کمپنی کا کام ڈیجیٹل سامراج ہے۔سینئرکانگریس لیڈر ادھیر رنجن چودھری نے بھی کہاہے کہ اس کمپنی کی زیر التواء تجاویزکو فیس بک انڈیا سے وابستہ افراد کی جانچ تک منظور نہیں کی جانی چاہیے۔چودھری نے ویڈیو لنک کے ذریعے نامہ نگاروں کوبتایاہے کہ دوہفتوں کے اندر ، تین نامور بین الاقوامی میڈیا گروپوں کے مضامین نے انکشاف کیاہے کہ فیس بک اور وہاٹس ایپ نے ہندوستان کی جمہوریت کوداغدار کیا ہے اورملک کی معاشرتی ہم آہنگی کو تار تار کردیاہے۔بی جے پی کے ساتھ ملی بھگت تازہ ترین انکشاف بھی اس کاثبوت ہے۔انہوں نے الزام لگایاہے کہ یہ ڈیجیٹل سامراج ہے۔