ایران پر پابندیوں کا سلسلہ جاری رہے گا:جو بائیڈن

واشنگٹن :امریکی صدر جو بائیڈن نے کہا ہے کہ ایران کو اپنے جوہری پروگرام پر مذاکرات میں کسی بھی واپسی سے قبل یورینیم افزودگی کے پروگرام کو روکنا ہوگا ۔ رپورٹ کے مطابق بائیڈن نے کہا کہ جوہری معاہدے سے دستبرداری کے بعد ڈونلڈ ٹرمپ کی طرف سے عائد سخت پابندیوں میں وہ کوئی نرمی نہیں کریں گے جبکہ ایران اپنے وعدوں پر قائم نہیں ہے‘۔ امریکی ٹیلی ویژن چینل سی بی ایس کے ساتھ انٹرویو کے دوران جب بائیڈن سے پوچھا گیا کہ کیا وہ ایران کو مذاکرات کے لیے راضی کرنے کے لیے پابندیاں اٹھائیں گے تو انہوں نے واضح جواب دیا کہ ’نہیں۔‘ جب ان سے پوچھا گیا کہ کیا ایران کو یورینیم کی افزودگی روکنا ہوگی، تو انہوں نے اثبات میں سر ہلا دیا۔ دریں اثناء ایران کے وزیر خارجہ محمد جواد ظریف نے کہا ہے کہ امریکہ کی جانب سے 2015 کے جوہری معاہدے سے علیحدگی پر ایران کو زر تلافی کی ادائیگی معاہدے کی بحالی کے لیے پیشگی شرط نہیں ہے۔ رپورٹ کے مطابق ایران جولائی 2015 میں چھ عالمی طاقتوں کے ساتھ جوہری معاہدے کی خلاف ورزی کرتے ہوئے یورینیم کو بیس فیصد تک افزودہ کرنا چاہتا ہے جبکہ اس وقت وہ چاراعشاریہ پانچ فیصد تک یورینیم کو افزودہ کررہا ہے۔